بیجنگ کے حامی پارلیمنٹری ارکان کا ہانگ کانگ کے پارلیمنٹ سے کوچ - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: پیر, 7 نومبر, 2016
0

بیجنگ کے حامی پارلیمنٹری ارکان کا ہانگ کانگ کے پارلیمنٹ سے کوچ

3-2

لندن: «الشرق الأوسط اون لا ئن

بیجنگ کے دسیوں حامی ارکان آج ہانگ کانگ کے پارلیمنٹ سے اسلئے کوچ کرگئے تاکہ علیحدگی کے حامی دو سرگرم اراکین کی حلف برداری نہ ہوجائے  جس سے خدشہ ہے کہ چین کے تابع اس شہر میں نیا کوئ دستوری بحران  پيدا ہوجائے۔ واضح رہے کہ گزشتہ دور میں برطانیہ کے زیر اثر رہے شہر ہانگ کانگ میں ایک طویل عرصہ سے علیحدگی کا مسئلہ ممنوعات میں شمار کیا جا تا ہے۔ 1997ء میں چین کے زیر نگیں آنے کے بعد سے ہانگ کانگ میں ایک اسٹیٹ کا نظام یا دو نظام کے طور پر حکومت چلتی ہے۔

منگل کی شام کو حکومت ان دونوں  باغیو لیونغ (03سال) اور ویاووای تشینغ (25 سال) كی حلف برداری کو ملتوی کر نے کی غیر معمولی قانونی کوشس ميں ناکام رہی.

لیکن سپریم کورٹ کے جج ٹوماس او نے اگلے ماہ کے شروع میں فیصلہ پر نظر ثانی کرنے کے حکومتی مطالبہ پر اپنی منظوری ديدی اور چین کے حامی پارلیمانی ارکان آج قانون ساز اسمبلی سے چین اور ہانگ کانگ کے دونوں کے پرچموں کو اپنی اپنی کرسیوں پر چهوڑ کر باہر نکل آئے تاکہ قانونی کارروائی مکمل نہ ہو سکے۔ ریجینا ایب نے جو کہ معتبر پارلیمنٹری کی حیثیت رکھتی ہیں کہا کہ وہ عام طور پر پارلیمانی ارکان کے ہال سے کوچ کرنے پر متفق نہیں ہے، لیکن  انہوں نے اس بات کی طرف اشارہ کیا ہے کہ ہمارے آبائی وطن کے ساتھ اہانت کرنے پر  دونوں کارکنان کا معافی مانگنے سےانکار کرنے کے بعد ان کے پاس کوئی اختیار نہیں تھا،  یاو نے کہا کہ چین کے حامی ارکان ہی کو معافی مانگنی چاہئے کیونکہ انہوں نے حقیقت میں ہانگ  کانگ کے عوام کے ساتھ دغا با‌‌‎زی کی ہے۔

ہانگ کانگ پارلیمنٹ کے نئے صدر اندرو لویونج نے جو کہ بیجنگ کے حامیوں میں سے ہیں یاو ولیونج کی حلف برداری کے سلسلہ میں حکومت کی کوشس کو رد کرتے ہوئے کہاکہ یہ دونوں اراکین صحیح طور طریقے سے انتخاب کئے گئے ہیں اور میری قانونی ذمہ داری کا تقاضہ ہے کہ ان دونوں کی قانونی حلف برداری کے حق کی حفاظت کروں، کیونکہ وہ قانون ساز اسمبلی کے رکن ہو چکے ہیں۔ مزید اپنی رائے کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہانگ کانگ قانونی بحران سے بہت زیادہ دور ہے اور وہ اپنے فیصلے سے  شرمنده نہیں ہیں،  لیکن یہ واضح نہیں ہو سکا کہ دونوں حلف کب اٹھائیں گے.

اسمبلی کے باہر بیجنگ کے سینکڑوں حمایتی مظاہرہ کرتے ہوئے اکٹھے ہوگئے اور بعض لوگوں نے ایسے بینرز لے رکهے تهے جن میں ان دونوں کو جاپانی فوج کے لباس میں پیش کیا گیا تها اور لباسوں پر غداری وغیرہ کے الفاظ لکھے تھے اور مظاہرین آواز بلند کرتے ہو ئے چین کی حمایت کرنے کے لئے ان دونوں کی دستبرداری وعلیحدگی کا مطالبہ بھی کر رہے تهے۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>