ابتدائی سو (100) دن خارجہ پالیسی سمجھنے کے لئے۔ ۔ ۔ بريباس ٹرمپ عملے کا اعلی عہدیدار - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
به قلم:
کو: منگل, 15 نومبر, 2016
0

ابتدائی سو (100) دن خارجہ پالیسی سمجھنے کے لئے۔ ۔ ۔ بريباس ٹرمپ عملے کا اعلی عہدیدار

پہلی تقرریاں اعتدال پسندی اور مقبولیت کے مابین نزاع کا راستہ ہموار کر رہی ہیں۔

پہلی تقرریاں اعتدال پسندی اور مقبولیت کے مابین نزاع کا راستہ ہموار کر رہی ہیں۔

%d8%b1%d8%a7%db%8c%d9%86%d8%b3-%d8%a8%d8%b1%db%8c%d8%a8%d8%a7%d8%b3

راینس بریباس

واشنگٹن: ہبہ القدسی

     وائٹ ہاؤس عملے کے چیف آف اسٹاف راینس  بریباس  نے اپنے سب سے پہلے بیان میں یہ کہا کہ نومنتخب صدر ڈونالڈ ٹرامپ ریاستہائے متحدہ کی قیادت کرنے کے لئے تیار ہیں اور کانگریس جس میں  ریپبلکن کا غلبہ ہے وہ بھی ان کے ساتھ تعاون کرنے کو تیار ہے۔

     بریبس نے یہ بھی واضح کیا کہ صدارت کے پہلے سو (100) دن میں چند مسائل کو حل کرنا چاہتے ہیں۔ "اے بی سی” چینل کو دیئے گئے ان کے بیان کے مطابق  ان مسائل میں غیرقانونی تارکین وطن، ٹیکس میں کمی، امریکی خارجہ پالیسی کو "سمجھنا”، عالمی سطح پر امریکہ کا مقام اور صحت کی دیکھ بھال (اوباما کیئر) کے لئے امریکی صدر بارک اوباما کے بنائے ہوئے قانون میں ترمیم کرنا شامل ہیں۔

     دریں اثناء، حکمت عملی تیار کرنے والی ٹیم کے بڑے منصب پر ٹرامپ کی جانب سے اسٹیف بانون دائیں بازو کے انتہاء پسند سیاسی کو منتخب کرنے کی وجہ سے کل ان پر بے انتہاء تنقیدیں ہوئیں۔

     دو مقبول ترین دھڑیں جن میں سے ایک کی  نمائندگی بانون کر رہے ہیں اور ٹرامپ کی کامیاب انتخابی مہم میں ان کا بڑا کردار رہا ہے ، ان کی پارٹی کے اندر ہی اعتدال پسند کمیٹی جس کا کہ واشنگٹن میں رعب و دبدبہ ہے جس کی نمائندگی بریباس کر رہے ہیں،بریباس اور بانون کی تقرری وائٹ ہاؤس میں ان دونوں پارٹیوں کے مابین ممکنہ جنگ کا اشارہ دیتی ہیں۔

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>