"حزب اللہ" کے اسلحہ سے امریکہ سیخ پا ہو رہا ہے - واشنگٹن تحقیقات کر رہا ہے - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
به قلم:
کو: جمعرات, 17 نومبر, 2016
0

"حزب اللہ” کے اسلحہ سے امریکہ سیخ پا ہو رہا ہے — واشنگٹن تحقیقات کر رہا ہے

لبنانی فوج کی تردید کہ یہ اسکے گوداموں سے لیا گیا ہے

%d8%b3%d9%84%d8%a7%d8%ad-%d8%ad%d8%b2%d8%a8-%d8%a7%d9%84%d9%84%d9%87

(لبنان میں”حزب اللہ” کی قوت کا مظاہرہ (ایرانی روزنامہ "الوفاق”

بیروت: نذیر رضا

       گذشتہ اتوار کو "حزب اللہ” لبنانی نامی جماعت کی طرف سے شامی علاقے "القصیر” میں امریکی فوجی سازوسامان کے آثار ظاہر ہونے کے بعد  لبنان  خدشات اور خوف میں مبتلا  ہے کہ اس سے ریاست ہائے متحدہ امریکہ کی لبنانی فوج کو  امداد   ات متاثر ہوگی۔

      کل  لبنانی فوج  نے تردید کی کہ یہ ساز وسامان فوج سے لیا گیا ہے، دریں اثناء  اسکی قیادت  نے رہنمائی کے مرکز سے اپنے جاری بیان کے ذریعے  کہا کہ  "فوجی ساز و سامان جو کہ  میڈیا میں دیکھایا گیا ہے وہ  نہ تو  فوج کے گوداموں سے لیا گیا ہے اور نہ ہی  اس سے کوئی تعلق ہے”۔

      ریاست ہائے متحدہ  امریکہ ان ہتھیاروں کے  فوج سے لئے جانے کے مفروضے پر تحقیقات کر رہا ہے، جیسا کہ ڈپلومیٹک ذرائع نے "الشرق الاوسط” کو یقین دہانی کی  کہ حز ب تک اسکی رسائی  کی راہوں پر تحقیقات کی جائے گی۔ امریکی وزارت خارجہ کی ترجمان "الزابیتھ ٹروڈو ” نے کہا کہ امریکہ اس بارے میں تحقیقات کر رہا ہے۔  اور انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ "حزب” کے ہاتھوں میں  اس سامان کی موجودگی تشویش کا  باعث ہوگا۔

      "حزب” کے قریبی  لوگوں کا کہنا ہے کہ یہ فوجی ساز وسامان  "حزب” نے سن 2000 میں جنوبی لبنان سے اسرائیلی فوج کے انخلأ کے بعد حاصل کیا جو کہ  اسرائیل کےساتھ تعاون کرنے والی "جنوبی لبنانی فوج” کی ملیشیا کے پاس تھا۔  اسی طرح دیگر لوگوں کا کہنا ہے کہ "حزب” نے امریکہ ساز وسامان مشرقی حمص کے مضافاتی علاقوں میں "داعش” کے خلاف کاروائی کے دوران  ہتھیاروں  کےتاجروں کے ذریعے حاصل کیا یاد رہے کہ "داعش” نے اسکو عراقی فوج کے گوداموں سے حاصل کیا تھا۔

      ریٹائرڈ برگیڈئیر   "نسیب  حطیط” کہتے ہیں کہ "حزب” کے پاس فوجیوں کو منتقل کرنے والی امریکی بکتر بند گاڑیاں تھیں جو کہ ابتدائی طور پر اسرائیلی یا  دیگر ان علاقوں سے لی گئیں تھیں جن پر "جنوبی لبنان کی فوج” کی ملیشیا نے اسی کی دہائی میں فوجی کاروائی کے دوران کنٹرول حاصل کیا تھا۔

      مشرق وسطی میں اسٹریٹجک تحقیقی مرکز کے سربراہ "ہشام جابر” نے  اس بات پر زور دیا کہ "جنوبی لبنان” کی ملیشیا کا  فوجی ساز وسامان پر کنٹرول اسرائیلی حملے اور لبنانی فوج سے تعلقات رکھنے  کے نتیجے میں ہے، "جسے  سن 2000 کے بعد لبنانی فوج کو واپس کیا گیا۔

متعلقہ عنوانات‬:, ,
شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>