صوبہ رقہ میں اتحادی "داعش" سے میدان جنگ میں آمنے سامنے - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
به قلم:
کو: جمعہ, 25 نومبر, 2016
0

صوبہ رقہ میں اتحادی "داعش” سے میدان جنگ میں آمنے سامنے

داعش کے خلاف آپریشن میں امریکی افواج کی شمولیت کی "ڈیموکریٹک شامی فورسز” کی جانب سے تصدیق ۔۔۔ "خوذ بیضا شہر کے سول ڈیفنس” کا مشرقی حلب میں قحط سے انتباہ
daesh

کل دمشق کے نواحی علاقے مشرقی غوطہ کے شہر دوما پر حکومتی فضائی حملے کے بعد ایک شامی بچی عارضی ہسپتال میں منتقلی کے دوران روتے ہوئے

بیروت: بولا اسطیح –  کارولین عاکوم

      ایک کردی لیڈر نے انکشاف کیا ہے کہ داعش کے خاتمے کے لئے تشکیل شدہ بین الاقوامی اتحادی فورسز جسکا مشن کردی اکثریتی شامی ڈیموکریٹک فورسز» کے لئے تکنیکی، فنی اور مشاورتی سپورٹ تک محدود تھا، رقہ کو آزاد کرانے کے لئے  شروع ہوئی جنگ کے آغاز سے وہ "عوامی حفاظتی یونٹس” کے ساتھ  شانہ بہ شانہ لڑ رہے ہیں، انہوں نے امریکی اور یورپی افواج کی خطے میں  موجودگی کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ”داعش” کے جتھوں سے وہ آمنے سامنے کی جنگ لڑ رہےہیں۔

      "ڈیموکریٹک شامی فورسیز ” کی جنرل کمانڈ کے مشیر ناصر منصور نے "الشرق الاوسط” سے بات کرتے ہوئے کہا کہ امریکی اور دیگر بین الاقوامی اتحادی افواج شام میں پہلی بار "داعش” کے عناصر کے خلاف آمنے سامنے کی جنگ لڑ رہی ہے۔ دریں اثناء گزشتہ کل واشنگٹن نے اپنے ایک فوجی کا مقامی طور پر ہاتھ سے تیار کردہ بم دھماکہ سے شام میں بالتحدید شمالی رقہ کے مضافاتی علاقے عین عیسی میں ہلاکت کا اعلان کیا۔

       دوسری جانب، شام میں ” خوذ بیضا ” نامی شہر کے سول ڈیفنس نے مشرقی حلب میں  متوقع قحط سے خبردار کیا ہے، اس نے اعلانیہ طور پر کہا ہے کہ ان علاقوں کے رہائشیوں کے پاس دس دنوں سے کم وقت ہے کہ انہیں امدادی سامان حاصل ہوجائے یا پھر بھوک اور موت کا سامنا کریں۔ حلب میں شہری دفاعی کاروائی کے ڈائریکٹر "عمار سلمو” نے "الشرق الاوسط” سے بات کرتے ہوئے کہا کہ آرگنائزیشن نے حلب میں  متوقع قحط سے  مارکیٹوں میں کھانے پینے والی غذائی اشیاء کے نہ ملنے سے لوگوں میں "بھوک کے اثرات” کا جائزہ لینے کے بعد کیا ہے۔

متعلقہ عنوانات‬:, ,
شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>