ایران صومالیہ کے راستے یمنی انقلابیوں کو مسلح کر رہا ہے: برطانوی رپورٹ - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعرات, 1 دسمبر, 2016
0

ایران صومالیہ کے راستے یمنی انقلابیوں کو مسلح کر رہا ہے: برطانوی رپورٹ

اقوام متحدہ میں بلیک لسٹ حوثی رہنما عرب اتحادیوں کے حملے کا نشانہ

%d8%a8%d8%b1%d9%8a%d8%b7%d8%a7%d9%86%d9%8a

لندن – تعز: "الشرق الاوسط”

         یورپی یونین کی مالی معاونت سے چلنے والی تحقیقی یا تنازعوں سے نمٹنے والی تنظیم نے انکشاف کیا ہے کہ ایران صومالیہ کے ذریعے یمن میں اپنے اتحادی حوثییوں کو ہتھیار فراہمی میں ملوث ہے۔

         برطانیہ میں قائم شدہ "مسلح تنازعوں پر تحقیقی” تنظیم نے کہا کے کہ "اس نے فروری 2016 میں روز مرہ کی تفتیش کے دوران اسلحہ کی اس تصویر کا تجزیہ کر لیا ہے جس میں آسٹریلوی اور فرانسیسی بحری جہاز کے ذریعے یہ اسلحہ صومالیہ کے راستے حوثیوں کی طرف سمگل کیا گیا۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ صومالیہ جانے والے "ڈاؤ” نامی آسٹریلوی جہاز میں کلاشنکوف رائفلوں اور ایک سو ایرانی ساختہ راکٹ لانچر سمیت دو ہزار سے زائد ہتھیار تھے۔

      اسی ضمن میں تعز میں عسکری کمیٹی نے رواں ہفتے کے آغاز میں تعز شہر سے باہر عرب اتحادی افواج کے حملوں میں میدانی حوثی ملیشیاؤں کے رہنما ابو علی الحاکم کے زخمی ہونے کا انکشاف کیا ہے جو عالمی سلامتی کونسل کی جنگی مجرموں کی فہرست میں شامل ہیں۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

متعلقہ عنوانات‬:, , ,
شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>