مشرقی حلب میں مخالفین پر گھیرا تنگ - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: بدھ, 7 دسمبر, 2016
0

مشرقی حلب میں مخالفین پر گھیرا تنگ

لافروف  کی مخالف جماعتوں کو "کچلنے” کی دھمکی
1481048229264458500

مشرقی حلب کے صاخور نامی علاقے میں شامی حکومتی افواج اور اتحادی ملیشاؤں کے حالیہ حملے کے دوران دو تباہ شدہ ایمبولینسں، جسے شامی مخالف افواج استعمال کرتی رہیں ہیں۔

ماسکو: طہ عبد الواحد – بیروت: "الشرق الاوسط”

       حلب کے شہر سے بلا کسی استثناء تمام مسلح افراد کے نکلنے پر روسی وزیر خارجہ سیرگی لافروف کی ریاست ہائے متحدہ امریکہ سے اس سمجھوتے سے متعلق توقعات پوری نہیں ہوئیں کہ جن پر وہ نہایت ہی پر امید تھے۔ لیکن یہ سب مسلح جماعتوں کو مشرقی حلب سے باہر نہ نکلنے کی صورت میں انہیں کچلنے کی تنبیہہ کو دہرانے سے اسے منع نہیں کرتا، جبکہ حکومتی اس کےاتحادیوں کی افواج کی دیگر علاقوں کی جانب پیش قدمی اور کنٹرول سے ان کے گرد گھیرا مزید تنگ ہوتا جا رہا ہے۔

       کل ماسکو میں پریس کانفرنس کے دوران لافروف نے  کہا کہ "کل (بروز پیر) شام اچانک ریاست ہائے متحدہ امریکہ  کی جانب سے روس کو اطلاع دی گئی کہ وہ اپنے  ماہرین کی آج (یعنی گذشتہ کل) جینوا میں ہونے والے مذاکرات میں شرکت نہ کرنے  پر معذرت خواہ ہے، یعنی امریکی رائے بدل چکی ہے اور  وہ مشرقی حلب کی جانب سے مسلح جماعتوں کی واپسی کے بارے میں اپنی سابقہ تجاویز سے دستبردار ہوتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ مشرقی حلب کی صورت حال کے حوالے سے امریکیوں کے پاس ایک نئی تجویز  ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سے یوں معلوم ہوتا ہے کہ وہ جنگجوؤں کومزید مہلت دلانا چاہتا ہے تاکہ وہ اپنے حوصلوں کو ایک بار پھر بحال کرسکیں”۔

      لافروف نے مشرقی حلب چھوڑنے سے انکارکرنے والے ہر ایک کو ختم کرنے کے عزم کا اظہار کیا۔ انہوں نے بالکل واضح الفاظ میں کہا کہ: "کسی بھی صورت میں اگر کوئی (مشرقی حلب) سے با آسانی نکلنے سے منع کرے گا تو اس کو جلدختم کر دیا جائے گا۔

       دوسری جانب، فرانسیسی اخباری ایجینسی کے مطابق امریکی وزیر خارجہ جون کیری نے انکار کیا ہے کہ روس کے ساتھ حلب کے بحران پر مذاکرات کی معطلی کا ذمہ دار واشنگٹن ہے۔  جینوا مذاکرات میں امریکہ کی عدم شرکت پر لافروف کے جاری بیان پر تبصرہ کرتے ہوئے کیری نے کہا کہ "کسی خاص مستردگی کے بارے میں مجھے کوئی علم نہیں”۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

متعلقہ عنوانات‬:, , ,
شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>