ایران پر ٹرمپ کے جرنیلوں کی نگاہیں - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: اتوار, 11 دسمبر, 2016
0

ایران پر ٹرمپ کے جرنیلوں کی نگاہیں

%d9%b9%d8%b1%d9%85%d9%be

مائکل فلائن ، جیمز میٹس اور جان کیلی

واشنگٹن: گریگ  جیف

      نو منتخب امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی طرف سے تین جرنیلوں کا انتخاب موجودہ صدر براک اوباما کی خارجی پالیسی اور خاص طور پر ایران سے متعلق ان کی پالیسی کو ختم کرنے کے مرادف ہے کیونکہ انہوں نے "جیمز میٹس” کو وزیر دفاع، مائکل فلائن کو قومی سلامتی کا وزیر اور جان کیلی کو ہوم لینڈ سیکورٹی کا وزیر منتخب کیا ہے۔

      ان تینوں جرنیلوں کے خیالات اب تک ایران میں اعتدال پسند سیاست دانوں کو بااختیار بنانے والی امریکی پالیسی کے لئے رکاوٹ ہے ۔

      جرنيل فلائن نے "میدان جنگ” نامی اپنی تازہ ترین کتاب میں لکھا ہے کہ ہمارے سامنے ایک عالمی جنگ ہے  لیکن چند امریکی شہریوں  کو اس جنگ  کا ادراک ہے اور ان میں سے بڑی تعداد کے ذہن میں تو اس جنگ میں کامیابی حاصل کرنے کا کوئی خیال ہی نہیں ہے۔

      جہاں تک جرنيل میٹس کی بات ہے تو ایرانی دھمکی سے متعلق ان کے تبصرے کی وجہ سے وائٹ ہاؤس کے ساتھ کشیدگی پیدا ہوچکی ہے کیونکہ میٹس نے اوباما کی انتظامیہ پر الزام لگایا ہے کہ ان کی انتظامیہ خطے میں متحدہ  امریکہ کے رجوع ہونے کے تاثر کو فروغ دے رہی ہے۔

      ان دونوں جرنیلوں (میٹس اور کیلی) کو ملک کی خارجی پالیسی کے محکمہ اور امریکہ کے اتحادی خلیج عرب میں بڑا احترام اور مقبولیت حاصل ہے۔

      سی آئی اے میں مشرق وسطی کے امور کے سابق تجزیہ کار ڈین پیمان کہتے ہیں کہ ٹرمپ کے مشیروں کو بہت زیادہ ذاتی تجربات حاصل ہیں اور وہ ایران دشمنی کے سلسلہ میں یہ سمجھ کر غور وفکرکرتے ہیں کہ ان کا منصوبہ بہت ہی پختہ ہوتا ہے  نہ کہ کسی مشتعل جماعت کا جذباتی تصرف ۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>