"داعش" مصری چرچ میں دھماکہ کی ذمہ دار - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: بدھ, 14 دسمبر, 2016
0

"داعش” مصری چرچ میں دھماکہ کی ذمہ دار

"نوے کی دہائی جیسی دہشت گردی” پر قاہرہ کی تشویش
news-131216-b

کل قاہرہ کے مقطم قبرستان میں پطرسیہ چرچ کے حادثہ میں ہلاک ہونے والوں کے جنازے کے دوران مصری خواتین (رویٹرز)

قاہرہ: محمد حسن شعبان

         تنظیم داعش نے کل اپنے جاری بیان میں گذشتہ اتوار کے روز قاہرہ کے وسطی علاقے عباسیہ کے چرچ میں ہونے والے دھماکہ کی ذمہ داری قبول کی ہے- اس سے قبل مصری وزارت داخلہ نے سید قطب اور تنظیم انصار بیت المقدس کے نظریات کے حامل افراد کو اس دھماکہ کا ذمہ دار ٹھرایا تھا۔

        کل "داعش” کے جاری بیان جسے "رویٹر” نے نشر کیا ہے اس میں کہا گیا ہے کہ ابو عبد اللہ المصری نامی خود کش حملہ آّور نے چرچ میں خود کش بیلٹ کے ذریعے دھماکہ کیا- علاوہ ازیں تنظیم نے دہشت گردانہ مزید حملوں کی بھی دھمکی دی ہے۔

        مصری وزارت داخلہ نے وضاحت کی تھی کہ اس کاروائی میں "ابو دجانہ الکنانی” کی کنیت کا حامل مرکزی ملزم اخوان المسلمین کے رہنما سید قطب کے نظریات کا حامل تھا جنہیں گذشتہ صدی میں چهٹے کی دہائی کے وسط میں قاہرہ میں پھانسی دے دی گئی تھی۔ نوے کی دہائی جیسی دہشت گردی لوٹ آنے پر مصر کے سیکورٹی حکام تشویش کا شکار ہیں۔

       مصری وزارت داخلہ کے بیان میں کہا گیا ہے کہ دھماکہ کا مرکزی ملزم ابو دجانہ الکنانی "فیوم” میں اپنی رہائش گاہ کے  قریب اخوان المسلمین کے ایک خاندان کے ساتھ منسلک تھا- فیوم کو ان خیالات کے حامل افراد کا گڑھ شمار کیا جاتا ہے اور یہ تکفیری جماعت "شوقی  الشیخ” کے ساتھ منسلک ہے جنہوں نے جہادی تنظیم میں اپنی خدمات دی تھیں وہ  اپنے مخصوص نظریات قائم کرنے سے پہلے کئی سال کے لئے گرفتار کئے گئے- انہوں نے حکومت اور دوسرے لوگوں  (جو شوقى کى فكر وخيالات سے  منسلكـ نہیں ہیں) کے خلاف ہتھیار اٹھانے کی مكتب فکر وخيال کی بنیاد رکھی۔

        اندرونی جانچ وتحقيقات کے مطابق الکنانی کا ایک تکفیری ٹھکانہ سے رابطہ تھا تاکہ وہ سید قطب کی اخوان المسلمین سے پیدا ہونے والے تکفیری نظریات کو اپنا سکے- تحقیقات میں اس جانب بھی اشارہ کیا گیا ہے کہ وہ دو مقدمات میں مطلوب تھا۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>