لبنان: قائم مقام حکومت - سیکورٹی میں مضبوطی اور معیشت میں حرکت - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: پیر, 19 دسمبر, 2016
0

لبنان: قائم مقام حکومت – سیکورٹی میں مضبوطی اور معیشت میں حرکت

1482091348254185400

کل بعبدا محل میں لبنان کے صدر وزیراعظم اور ایوان نمائندگان کے سربراہ کے درمیان بیٹھے ہیں (رویٹرز)

 

بیروت: "الشرق الاوسط”

 

       کل شام بیروت میں لبنان کے نئے دور کی پہلی حکومت نے صدر میشال عون کی سربراہی میں اعلان کیا جس پر وزیر اعظم سعد الحریری نے اس سے متعلق بہت زیادہ امیدوں کے وابسطہ ہونے کے سبب تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا اورآئندہ سال کے وسط میں پارلیمانی انتخابات کی جانب اشارہ کرتے ہوئے اسے "قائم مقام حکومت” قرار دیا۔ مگر اس کے باوجود انہوں نے اسے کئی ایک عنوانات دیئے جن میں سر فہرست اندرون ملک سیکورٹی کی مضبوطی، ملکی معاشی پہیے کو حرکت دی جو ڈیڑھ سے دو سال ایوان صدر کے خلا کی وجہ سے متاثر ہوئے۔

       وزارتی کابینہ کی تشکیل کے لئے 30 نشستیں مختص کی گئیں ہیں، جبکہ الحریری کو ریاست کے چھ وزراء نامزد کرنے پر مجبور کیا گیا۔ الحریری نے تشکیل کے اعلان کے بعد اپنے خطاب میں زور دیا کہ "ان کی حکومت اپنی مختصر مدت کے دوران قابل اصلاح امور میں حتی المقدور فوری اصلاح کی کوشش کرے گی، جن میں سرفہرست تیل اور بجلی کی مشکلات ہیں۔ جبکہ سیاسی اعتبار سے اس کا پہلا ہدف یہ ہے کہ ایوان نمائندگان کے تعاون سے نئے انتخابی قانون تک رسائی حاصل کی جائے جو مقررہ وقت پر پارلیمانی انتخابات کے انعقاد اور شرح تناسب کی حفاظت کرے چنانچہ اس تناظر میں یہ حکومت قائم مقام (یا انتخابی) حکومت ہے۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>