"اوپیک معاہدہ" سے پہلے تیل کی قیمتوں میں اضافہ ہونے کی وجہ سے سعودیہ عرب کی اچھی توقع - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: اتوار, 25 دسمبر, 2016
0

"اوپیک معاہدہ” سے پہلے تیل کی قیمتوں میں اضافہ ہونے کی وجہ سے سعودیہ عرب کی اچھی توقع

1111

تیل کی تحفظی قیمت کے سلسلہ میں سعودی پٹرولیم وزیر کے اعلان کے باوجود سعودیہ عرب کو اگلے سال قیمتوں میں اضافہ ہونے کی اچھی توقع ہے۔

 خبر: وائل مہدی

       توقع یہ کی جارہی تھی کہ تیل کی قیمتوں سے متعلق کئے گئے اعلان کیے سلسلہ میں اس سال سعودی بجٹ زیادہ شفاف ہوگا لیکن ایسا نہیں ہوا بلکہ تیل کی قیمت کا مسئلہ تو  اگلے سال تک کی بجٹ کا ایک  راز ہی معلوم ہو رہا ہے اور یاد رہے کہ اسی سعودی بجٹ  کی بنیاد پر بجٹ کے تخمینے کا حساب لگایا جاتا ہے۔

        سعودی وزیر پٹرول خالد فالح نے جمعرات کو بجٹ میں تیل کی متعینہ قیمت کے بارے میں کچھ نہیں کہا لیکن انہوں نے صرف اس بات پر اکتفا کیا کہ سعودیہ عرب 2017 کے بجٹ میں تیل کی قیمتوں کے ایک تحفظی  منظر نامہ پر منحصر ہے۔

       وزیر نے کہا کہ سعودی عرب تیل کی قیمتوں میں اضافہ ہونے سے قطع نظر اپنی ترقیاتی منصوبوں میں آگے بڑھتا رہے گا اور اسی طرح انہوں نے اپنی اچھی توقع کا بھی اظہار کیا کہ آنے والے سالوں میں یہ ترقیاتی منصوبیں موجودہ سطح سے بلند ہوں گے۔

       "الشرق الاوسط” کو باخبر ذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ سعودی عرب نے اگلے سال کے بجٹ میں تیل کی قیمت کا حساب فی بیرل 55 ڈالر لگایا ہے اور اسی وجہ سے یہ توقع کی جارہی ہے کہ 2017 میں تیل کی آمدنی 46 فی صد کی زیادتی کے ساتھ  480  ارب ریال (128 ارب ڈالر) ہو جائے گی۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>