361 بلین ڈالر کی سرمایہ کاری کے ذریعہ قابل تجدید توانائی کی زیادتی میں چین کی قیادت - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعہ, 6 جنوری, 2017
0

361 بلین ڈالر کی سرمایہ کاری کے ذریعہ قابل تجدید توانائی کی زیادتی میں چین کی قیادت

5

قاہرہ: لمیاء نبیل

        عالمی معیشت کا شمار کیا جانے والا پہلا انجن چین گزشتہ دو سال کے دوران کوئلہ اور تیل کی کمپنیوں کے نقصان کے بعد قابل تجدید توانائی کی مارکیٹ میں سرمایہ کاری کے مواقع سے فائدہ اٹھانے کی کوشش کر رہا ہے،  اسی لئے بیجنگ نے صاف توانائی کے شعبے میں نئی سرمایہ کاری کرنے کا اعلان کیا ہے۔

        کل چین کی نیشنل انرجی ایڈمنسٹریشن نے کہا کہ بیجنگ 2020 کے آغاز تک قابل تجدید توانائی کے ذریعہ بجلی کی پیداوار میں 5.2 ٹریلین یوآن (361 بلین ڈالر) کی سرمایہ کاری کرے گا  اور اس کا مقصد پاور پلانٹس میں  ماحول کے لئے نقصان دہ کوئلے کے استعمال کے بجائے اس سے زیادہ صاف اور پائیدار  ایندھن کی مختلف قسموں کو استعمال کر کے دنیا کی سب سے بڑی توانائی مارکیٹ بننے کا ارادہ ہے۔

        انرجی ایڈمنسٹریشن نے 2016 اور 2020  کے دوران مقامی توانائی کے شعبے میں ترقی سے متعلق خاص دستاویز میں اس بات کی طرف اشارہ کیا ہے کہ ان سرمایہ کاریوں کے ذریعہ شعبہ میں 13 ملین سے زیادہ ملازمتوں کا اضافہ ہوگا  اور انہوں نے مزید کہا کہ آندھی، ہائیڈرو، شمسی اور نیوکلیائی  پاور پر مشتمل  یہ قابل تجدید توانائی 2020 تک تقریبا نصف بجلی پیدا کرنے میں حصہ لے سکے گی ۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>