"روسی معلومات" کی بنیاد پر ٹرمپ اور ان کے ایجینسیوں کے درماین کشمکش - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعرات, 12 جنوری, 2017
0

"روسی معلومات” کی بنیاد پر ٹرمپ اور ان کے ایجینسیوں کے درماین کشمکش

4

کل ٹرمپ نیویارک میں ایک پریس کانفرنس کے دوران خطاب کرتے ہوئے جس میں انہوں نے صدارت کے دوران کاروبار کے میدان سے اپنی دوری کی تصدیق میں سینکڑوں دستاویزات پیش کئے

واشنگٹن: منیر ماؤری

          جہاں ایک طرف نومنتخب امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کو اپنی انتظامیہ میں اعلی عہدوں کے لئے چند لوگوں کے انتخاب کی وجہ سے زبردست حملوں کا سامنا ہے اور ممکن ہے کہ ان حملوں کی وجہ سے ان کی انتظامیہ کی وزارتوں کے لئے ان کی طرف سے بعض منتخب کردہ وزیروں کی منظوری روک دی جائے وہیں ان کو دوسری طرف اپنے اور اپنی انٹیلی جنس ایجنسیوں کے درمیان ایک طرح کی کشمکش کا سامنا ہے کیونکہ انہوں نے انٹیلی جنس ایجنسیوں کی طرف سے من گھڑت رپورٹوں کے افشا کرنے کی وجہ سے ان کے عمل کو شرمناک قرار دیا ہے۔

        گزشتہ جولائی کے بعد نو منتخب صدر ٹرمپ  نے اپنی پہلی پریس کانفرنس میں کل اس بات کی تردید کی ہے کہ وہ کسی بھی قسم کے روسی بلیک میلنگ کے شکار نہیں ہوئے ہیں اور انہوں نے کہا کہ اس سلسلہ میں جو بھی معلومات ہیں وہ صرف ردی کی ٹوکری ہیں اور اسے امریکی انٹیلی جنس کی موصول شدہ رپورٹ میں شامل نہیں ہونا چاہئے تھا۔

        انہوں نے روسی بلیک میلنگ کی کہانی نشر والی "CNN” اسٹیشن کی طرف اشارہ کرتے ہوئے اس بات کی وضاحت کی کہ انٹیلی جنس رپورٹ میں جو معلومات تھیں وہ سب من گڑھت تھیں، شرم کی بات ہے کہ اس طرح کی معلومات نشر کی جائے، عیب کی بات ہے کہ انٹیلی جنس سروسز اسے ایک سرکاری رپورٹ میں بیان کرے یا ایک ٹی وی نیوز چینل اسے نشر کرے۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>