افغان رکن پارلیمنٹ کا الزام کہ ایران ان کے ملک میں افراتفری پھیلا رہا ہے - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
کو: جمعہ, 13 جنوری, 2017
0

افغان رکن پارلیمنٹ کا الزام کہ ایران ان کے ملک میں افراتفری پھیلا رہا ہے

محمدی کی جانب سے تعلیم اور ذرائع ابلاغ میں فرقہ ورانہ مداخلتوں کے خدشات کا اظہار
1484251365912982000_1

الحاج مولوی محمدی

كابل: ناصر الحقباجی

       افغان پارلیمانی رکن "الحاج مولوی ترہ خیل محمدی” نے کابل میں اپنے گھر پر "الشرق الاوسط” کو انٹرویو دیتے ہوئے یقین دہانی کی ہے کہ ہمسایہ ممالک جیسے ایران یا پاکستان یا خطے کے دیگر ممالک کی طرف سے افغان امور میں مداخلت کی جا رہی ہے۔ افغان امور میں ایرانی مداخلت کے بارے میں الحاج محمدی نے کہا: "افغانستان کو تباہ کرنے، اس کی صورت حال کو خراب کرنے اور افراتفری پھیلانے کے لئے یہاں ہر قسم کی مداخلت پائی جاتی ہے”۔

      انہوں نے مزید کہا کہ بعض افغان علاقوں میں غیر ملکی افواج نے مسلح افراد کے پاس ایرانی ہتھیاروں کے ہونے کا انکشاف کیا، جس پر افغان انٹیلی جنس کے سربراہ ایران گئے اور افغان امور میں ایرانی مداخلت پر اعتراض کیا”۔

       افغان رکن پارلیمنٹ نے ان کے ملک میں تعلیم، میڈیا اور ثقافت کے میدان میں فرقہ وارانہ مداخلت کے خدشات کا اظہار کیا۔

      انہوں نے کہا کہ "ہمارے ہاں ایک بڑی یونیورسٹی ہے جس میں علوم قرآن اور علوم حدیث پڑھائے جاتے ہیں، اس میں 4 ہزار 500 سے زائد طلباء ہیں، اس میں بم دھماکہ کیا گیا، جس سے قرآن پاک کو بکھرا گیا اور طالب علموں کو انہی کے خون میں ڈبو دیا گیا، انہوں نے ایسا کیوں کیا؟ کیا کوئی مسلمان ایسا کر سکتا ہے؟ ان کی تمام تر کوشش ہے کہ افغانستان میں استحکام نہ ہو تاکہ لوگ امن اور آشتی سے نہ رہیں”۔

       انہوں نے مزید کہا کہ یونیورسٹی میں ہونے والے اس حملے کی ذمہ داری نہ تو ایران نے قبول کی ہے اور نہ ہی اس کے کسی حمایت یافتہ نے، جبکہ اس کے مطابق تمام شواہد اسی کی جانب اشارہ کرتے ہیں۔

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>