خصوصی امریکی افواج کا یمن میں "القاعدہ" پر حملہ - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: پیر, 30 جنوری, 2017
0

خصوصی امریکی افواج کا یمن میں "القاعدہ” پر حملہ

پیر 3 جمادى الأولى 1438 ہجری ­ 30 جنوری  2017 ء شمارہ: (13943)
1485715822132242500

ایک یمنی خاتون امریکی ڈرون طیارے کے پوسٹر اور چاکنگ کی گئی دیوار کے سامنے سے گزرتے ہوئے (ا۔ب۔ا)

واشنگٹن: منیر الماوری

      رواں ماہ جنوری کی 20 تاریخ کو امریکہ کی صدارت سنبھالنے کے بعد ڈونالڈ ٹرمپ نے پہلی فوجی کاروائی کی منظوری دی۔ جس میں پرسوں رات (28 جنوری) کو خصوصی امریکی افواج نے  یمن پر حملہ کیا، جس میں”القاعدہ”  کے درجنوں مسلح افراد ہلاک ہوگئے۔اس کے علاوہ ان حملوں میں دو شہری اور ایک امریکی فوجی بھی ہلاک ہوئے ہیں۔

      دریں اثناء امریکی فوج نے وسطی علاقے "اچلا” پر حملے کے دوران یمن میں القاعدہ تنظیم کی ضمنی تنظیم "عرب جزیرہ میں قاعدہ الجہاد” کے 14 مسلح عناصر کو ہلاک کرنے کا اعلان کیا ہے، علاقائی ذرائع کے مطابق تنظیم کے درجنوں افراد ہلاک ہوئے ہیں۔

      ٹمپا، فلوریڈا میں امریکی سینٹرل کمانڈ کے مطابق گورنریٹ بیضاء پر حملہ کے دوران ایک امریکی فوجی ہلاک اور دیگر 3 زخمی ہوئے جبکہ چوتھا فوجی ہیلی کاپٹر کی "ہنگامی لینڈنگ” کے دواران زخمی ہوا۔ "اپاچی” ہیلی کاپٹر کے گرنے پر امریکی مرکزی کمان کی رپورٹ کے مطابق ہیلی کاپٹر لینڈنگ کے بعد پھر سے دوبارہ اڑنے کے قابل نہیں تھا چنانچہ اسے "جان بوچھ” کر تباہ کر دیا گیا۔

      امریکی ذرائع کے مطابق ہلاک ہانے والوں میں "انصار الشریعہ” کے رہنما عبد الرؤوف الذہب بھی شامل ہیں۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>