لیبیا کے مہاجر کیمپوں میں سزائے موت - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: پیر, 30 جنوری, 2017
0

لیبیا کے مہاجر کیمپوں میں سزائے موت

جرمن سفارت خانے کے تار کی خلاف ورزیوں کے بارے میں خبردار
پیر 3 جمادى الأولى 1438 ہجری ­ 30 جنوری  2017 ء شمارہ: (13943)
1485706405820944400

اطالوی بندرگاہ مسینا میں کل بچائے جانے والے افریقی تارکین وطن (ا۔ب)

 

برلن: "الشرق الاوسط”

      کل کی اطلاعات کے مطابق لیبیا کے مہاجر کیمپوں میں پھانسی سمیت انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں پر جرمن سفارت کاروں نے خبردار کیا ہے۔

      ہفت روزہ جرمن میگزین "ویلٹ ام سونٹگ” نے اپنے کل کے شمارہ میں نقل کیا ہے کہ نیجر کے دارالحکومت "نیامی” میں واقع جرمن سفارت خانے نے اتحادی مشاورتی دفتر اور دیگر اتحادی وزارتوں کو سفارتی پیغام نامے ارسال کئے کہ "وہاں انسانی حقوق کی سخت ترین خلاف ورزیاں کی جا رہی ہیں”۔ جرمن اخباری ایجنسی نے رپورٹ کے الفاظ کو نقل کیا کہ: "موبائل فون پر تصاویر اور ویڈیو ریکارڈ کیمپوں میں موجود نام نہاد نیجی جیلوں کے وجود کو ثابت کرتے ہیں جن میں لوگوں کے سخت ترین حالات دکھائے گئے ہیں۔

      میگزین نے رپورٹ کو نقل کرتے ہوئے مزید لکھا ہے کہ "ایسی نجی جیلوں سے تارکین وطن اسمگلروں کو گرفتار کر لیا گیا ہے”۔ رپورٹ کے مطابق: "پیسوں کی ادائیگی سے قاصر تارکین وطن کی سزائے موت، ان پر تشدد، ان کی عصمت دری کے ساتھ ساتھ ان سے بھتہ خوری یہاں روزانہ کا معمول ہے”۔

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>