لودر کے رہائشیوں کو "القاعدہ" کا سامنا اور 23 عناصر ہلاک - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
کو: اتوار, 5 فروری, 2017
0

لودر کے رہائشیوں کو "القاعدہ” کا سامنا اور 23 عناصر ہلاک

دہشتگردوں کی بھرتی پر «شامی منظر نامے» سے یمن میں انتباہ
news-040217-2

یمنی حکومتی افواج کا ایک جوان گذشتہ اگست کے نصف میں گورنریٹ ابین کے صدر مقام زنجبار کو تنظیم القاعدہ سے خالی کراتے ہوئے (غیتی)

 

لندن: بدر القحطانی

      یمنی فوجی ذرائع نے "الشرق الاوسط” کو یقین دہانی کی کہ (جنوبی یمن) کے گورنریٹ ابین کے علاقے لودر پر حملہ کی دوسری کوشش میں کل (جزیرہ عرب میں القاعدہ) کی تنظیم کے 23 عناصر ہلاک اور دیگر 8 عناصر زخمی ہوگئے۔

      (گورنریٹ ابین کے علاقے) جعار، احور اور شقرہ سیکیورٹی فورسز کے کمانڈر عبد اللطیف السید نے کہا کہ تنظیم کے عناصر شکست کھانے کے بعد ہلاک شدگان کی لاشوں کو ساتھ لے گئے، جبکہ ان جھڑپوں میں افواج کے ساتھ رہائشی افراد نے بھی ان کے خلاف حصہ لیا۔ السید نے مزید کہا کہ احور کے علاقے میں تنظیم کی دوسری کوشش بھی ناکامی سے دوچار رہی۔

      دوسری جانب (یمنی حکومت نواز) عوامی کمیٹیوں کے لیڈر نزار جعفر نے وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ گذشتہ دو دنوں میں جھڑپوں کے دوران "سامان اور تیاری کی کمی کے باوجود” لودر کے جنگجوؤں میں سے کوئی متاثر نہیں ہوا۔ انہوں نے یہ بات "مودین اور وضیع” کے علاقوں سے القاعدہ کی واپسی کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہی، ان علاقوں میں تنظیم کے مختلف شہریتوں کے حامل سرجن اور طبی سامان پایا جاتا ہے”۔

      تجزیہ کاروں نے”الشرق الاوسط” سے بات کرتے ہوئے حوثی اور سابق صدر علی عبد اللہ صالح کی ملیشیاؤں کے معاملہ میں شامی منظر نامے سے خبردار کیا ہے، جس میں جنگ کے دوران دہشت گرد گروپوں کی جانب سے استحصال کیا گیا۔ یمنی سیاسی تجزیہ نگار نجیب غلاب نے کہا کہ انقلابیوں کو شکست دینے کے لئے القاعدہ کو ایک بار پھر سے متحرک کرنے کا نیا امریکی منصوبہ یمن کے لئے بہت بڑا خطرہ ہے۔

 اتوار 9 جمادى الاول 1438 ہجری /­ 05 فروری 2017 ء  شمارہ: (13949)
شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>