"آستانہ" کے نگران شام میں جنگ بندی کو مستحکم کرنے کے لئے کوشاں - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: پیر, 6 فروری, 2017
0

"آستانہ” کے نگران شام میں جنگ بندی کو مستحکم کرنے کے لئے کوشاں

r45uw46uw56uw56uw

کل شمالی شام کے شہر الباب میں آزاد شامی فوج اور "داعش” کے مابین جھڑپوں سے فرار ہوتے ہوئے شہری (رویٹرز)

 

ماسكو: طہ عبد الواحد

       آج آستانہ کانفرنس کے نگران شامی فائل کے بارے میں قازقستان کے دارالحکومت میں خصوصی اجلاس منعقد کررہے ہیں، جس میں روس، ترکی، ایران اور اقوام متحدہ کے نمائندوں کی شرکت کے ساتھ تکنیکی بات چیت کا آغاز کیا جا رہا ہے۔ یاد رہے کہ یہ اجلاس شامی حکومت اور علیحدگی پسند شامی مسلح حزب اختلاف کے وفود کے مابین دو ہفتے قبل ہونے والے بالواسطہ مذاکرات کے بعد ہے۔

      قازقستان کے دارالحکومت سے ذرائع نے "الشرق الاوسط” سے کہا کہ آستانہ مذاکرات کے نگران ممالک  اس اجلاس میں "فوج کے مابین فنی بات چیت کے ذریعے تمام فریقوں کے لئے اطمینان بخش مفاہمت تک پہنچنے کی کوشش کریں گے۔ جبکہ مخصوص میکانزم کے ساتھ جنگ بندی کے معاہدے کی خلاف ورزیوں کو روکنے میں اپنا اپنا کردار ادا کرنے کے علاوہ انسانی امداد کی رسائی کو یقینی بنانے سیمت دیگر مسائل پر بھی بات چیت کی جائے گی”۔

      دریں اثناء، روسی وزیر خارجہ "سیرگی لافروف” نے اس بات پر زور دیا کہ آستانہ مذاکرات کے نگران ممالک اسے جنیوا مذاکرات کا متبادل بنانے کا ارادہ نہیں رکھتے۔ "پروفائل” میگزین کے ساتھ ان کے انٹرویو کو کل روسی وزارت خارجہ نے اپنی سرکاری ویب سائٹ پر نشر کیا ہے، جس میں لافروف نے جنیوا مذاکرات کی بحالی کا خیر مقدم کرتے ہوئے روس کی جانب سے ان مذاکرات کی حمایت کی یقین دہانی کی۔

پیر­ 10 جمادى الاول 1438 ہجری ­ 6 فروری 2017 ء  شمارہ: (13950)
الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>