موصل کی جنگ سے بغدادی جان بچا کر فرار - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعرات, 9 مارچ, 2017
0

موصل کی جنگ سے بغدادی جان بچا کر فرار

1

موصل: دلشاد عبد اللہ

        امریکی اور عراقی انٹیلیجنس ذرائع نے اپنے نقطۂ نظر کا اظہا کرتے ہوئے کہا ہے کہ تنظیم داعش کے لیڈر ابو بکر بغدادی نے موصل کی جنگ کو میدانی رہنماؤں اور ان کے متبعین کے حوالہ چھوڑ کر صحراء میں چھپے پھر رہے ہیں جہاں ان کی پوری توجہ اپنی زندگی کی بقاء پر مرکوز ہے۔

        "روئٹر” ایجنسی نے جن ذرائع کے بیانات کو نقل کیا ہے ان کا کہنا ہے کہ بغدادی کے پوشیدہ ہونے کی جگہ کے سلسلہ میں کوئی یقینی بات کہنی مشکل ہے لیکن تنظیم داعش کے کسی رہنماء کی طرف سے کسی سرکاری بیان کا نہ آنا اور موصل کے علاقوں میں اپنی دسترس کھو دینا یہ دونوں باتیں اس بات کی طرف اشارہ کر رہیں ہیں کہ انہوں نے شہر چھوڑ دیا ہے اور صحراء کے کسی گاؤں میں وہاں کے باشندوں کے درمیان جا چھپے ہیں۔

       اسی درمیان عراقی فوج نے اعلان کیا ہے کہ ان کی فورسز نے موصل کی سرکاری عمارتوں کے قریب تنظیم داعش کے خلاف زبردست حملہ کیا ہے اور تلعفر کی طرف جانے والے مرکزی راستہ پر قبضہ کر لیا ہے اور اس مناسبت سے یہ یاد رہے کہ تلعفر کا علاقہ وہ علاقہ ہے جہاں متشدد لوگوں کا قبضہ ہے۔

جمعرات 10 جمادی الثانی 1438ہجری – 9 مارچ 2017ء شمارہ نمبر {13981}

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>

Time limit is exhausted. Please reload CAPTCHA.