"جینوا 4" میں کوئی مثبت پیش رفت نہیں ہوئی : مخالف جماعتوں کے اہم مذاکرات کار - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
به قلم:
کو: پیر, 13 مارچ, 2017
0

"جینوا 4” میں کوئی مثبت پیش رفت نہیں ہوئی : مخالف جماعتوں کے اہم مذاکرات کار

الوعر پر بمباری کے باعث شامی علیحدگی پسندوں کا "آستانہ 3” کا بائیکاٹ
1489341231558397800

"جنیوا 4” میں مخالف جماعتوں کے وفد کے اہم مذاکرات کار محمد صبرا

 

لندن: غالیہ قبانی – بيروت: نذير رضا

      شامی مخالف جماعتوں کے اہم مذاکرات کار محمد صبرا کے مطابق اقوام متحدہ کی زیر نگرانی شامی مذاکرات کے گذشتہ (چوتھے) راؤنڈ میں کوئی مثبت پیش رفت نہیں ہوئی۔ کیونکہ حکومت ابھی تک واضح ریفرنس کے سیاسی عمل کو مسترد کرتے ہوئے جنیوا بیان پر اتفاق کرنے سے انکار کر رہی ہے۔

      "الشرق الاوسط” سے انٹرویو کے دوران یہ بات سامنے آئی کہ اقوام متحدہ کے ایلچی سٹیفن ڈی مستورا کی طرف سے فراہم کردہ وضاحت قرار داد 2254  اور بنیادی ڈھانچے کی شق 4 کی عبارت کے مطابق نہیں ہے۔ چنانچہ وفد نے تجویز پیش کی کہ  وضاحت میں اس تضاد کو دور کیا جائے، تکنیکی ٹیم تشکیل دی جائے یا اقوام متحدہ کے چارٹر کے آرٹیکل 96 کی لاگو کیا جائے؛ جو سیکرٹری جنرل کو بین الاقوامی عدالت انصاف سے مشاورتی رائے لینے کی اجازت دیتا ہے۔ صبرا نے مزید کہا کہ ڈی مستورا نے ان تمام تجاویز کو مسترد کر دیا ہے۔

      دوسری جانب "آزاد شامی کے قانونی وکیل اسامہ ابو زید نے یقین دہانی کی کہ مخالف جماعتوں نے رواں ہفتے میں منعقدہ "آستانہ 3” کانفرنس کا بائیکاٹ کرنے کا فیصلہ کیا ہے، جو کہ حمص کے الوعر محلے پر مسلسل بمباری اور خلاف ورزیوں کے ساتھ روس کی براہ راست زیر نگرانی علاقے کے رہائشیوں کو نقل مکانی پر مجبور کرنے کے سبب ہے۔

پیر 14 جمادى الثانی 1438 ہجری­ 13 مارچ 2017ء  شمارہ: (13985)
شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>