برسلز حملے کی برسی کے موقع پر لندن کے مرکز میں دہشت گردانہ حملہ - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعرات, 23 مارچ, 2017
0

برسلز حملے کی برسی کے موقع پر لندن کے مرکز میں دہشت گردانہ حملہ

پارلیمنٹ کے قریب کچلنے اور چھری کے حملے میں ایک پولیس اہلکار سمیت 4 افراد ہلاک اور 20  سے زائد زخمی
oltkdhdjdhfbvgdfgdfdw6dtwftfwq

کل لندن میں پارلیمنٹ کی عمارت کے قریب ویسٹ منسٹر برج پر گاڑی سے کچلنے کے حملے میں ایک زخمی (رویٹرز) فریم تصویر میں اسکی ہلاکت کے بعد کا منظر (ا.ب)

لندن: رنيم حنوش

      لندن پارلیمنٹ کے قریب ایک شخص کی طرف سے کئے گئے دہشت گردانہ حملے کے بعد علاقے میں خوف و ہراس کا ماحول پایا جا رہا ہے۔ یہ حملہ اس وقت ہوا کہ جب برسلز حملوں کی پہلی برسی منائی جا رہی تھی اور دہشت گردی کے خلاف بین الاقوامی اتحادیوں کا واشنگٹن میں اجلاس جاری تھا۔

      حملے کے آغاز میں حملہ آور نے ویسٹ منسٹر پل پر انتہائی ٹریفک کے دوران ایک چار پہیوں والی گاڑی (کار) سے پیدل چلنے والوں  کو کچلنے کی کاروائی سے کیا گیا، جس میں کم سے کم دو افراد ہلاک اور 20 سے زائد افراد زخمی ہوگئے، حکومت کے مطابق ان میں سے اکثریت کی "حالت تشویشناک” ہے۔ اس کے بعد قبل اس کے کہ سیکورٹی اہلکار اس پر فائرنگ کرتے حملہ آور نے چھری سے پولیس اہلکار پر حملہ کر دیا۔

      حملے کے فوری بعد پارلیمنٹ کی عمارت کو بند کر دیا گیا اور جو ایوان نمائندگان اس میں موجود تھے ان سے کہا گیا کہ وہ اسی عمارت میں رہیں تاآنکہ انہیں مسلح پولیس اہلکاروں کے ہمراہ وہاں سے نکال کر ساتھ ہی موجود "اسکاٹ لینڈ” کے دفتر میں منتقل نہ کر دیا جائے۔ حملے کے وقت وزیر اعظم تھریسا مئے بھی پارلیمنٹ میں داخل ہو رہیں تھیں، مگر بعد میں منتشر تصاویر میں دکھایا گیا ہے کہ وہ فوری طور پر سرکاری گاڑی میں بیٹھ کر پارلیمنٹ کی نکل گئیں۔ کل شام مئے کی سربراہی میں اجلاس منعقد ہوا، جس کے بعد حملہ آور کو "مریض” قرار دیتے ہوئے اس حملے کو "برطانوی حکومت کو ناکام بنانے کی کوشش قرار دیا گیا”۔

      انسداد دہشتگردی پولیس کے سربراہ مارک راولی نے تفصیلات بناتے سے انکار کرتے ہوئے کہا کہ حملے کے بعد برطانوی دارالحکومت میں ہر طرف "بڑے پیمانے پر کاروائی” کا آغاز کر دیا گیا ہے۔ دریں اثناء "برطانیہ کی اسلامی کونسل” نے اپنے بیان میں اس حملے کی مذمت کی ہے۔

 

جمعرات 24 جمادى الثانی 1438 ہجری­ 23 مارچ 2017ء  شمارہ: (13995)
الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>