حوثیوں کی طرف سے ہراساں کئے جانے کے باعث "بغیر سرحدوں کے ڈاکٹر" اب چھوڑنے پر مجبور - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
کو: جمعہ, 24 مارچ, 2017
0

حوثیوں کی طرف سے ہراساں کئے جانے کے باعث "بغیر سرحدوں کے ڈاکٹر” اب چھوڑنے پر مجبور

حجہ میں انقلابیوں کی امداد بند کرنے کے لئے قانونی حکومت بڑی شاہراہ کا کنٹرول سنبھال رہی ہے
1490296371433716500

اقوام متحدہ کی جانب سے یمن میں انسانی امور کے دفتر کے ڈائریکٹر جارج خوری کل الحدیدہ میں جنگجوؤں اور بغاوت کے حامی عہدیداران سے بات چیت کرتے ہوئے (رویٹرز)

 

رياض: عبد الہادی حبتور – جدہ: سعيد الابيض

      شمالی یمن میں حوثی ملیشیا کے زیر کنٹرول اب گورنریٹ کے انقلاب ہسپتال میں "بلا سرحد ڈاکٹروں” کی آرگنائزیشن نے اپنا کام بند کرنے کا اعلان کیا ہے۔ کیونکہ وہ انتظامی طور پر آزادانہ اور غیر جانبدارانہ سرگرمیوں کو جاری رکھنے سے قاصر ہیں۔

      آرگنائزیشن نے اپنے بیان؛ جس کا ایک نسخہ "الشرق الاوسط” کو ملا ہے، میں کہا ہے کہ اس علاقے سے انخلا فوری طور پر نہیں بلکہ آئندہ تین ماہ کے دوران بتدریج ہوگا۔

      آرگنائزیشن نے نشاندہی کی کہ انہوں نے گورنریٹ "اب” کے انقلاب ہسپتال میں جنوری 2016 سے فوری طبی امداد اور زندگی بچانے کی خدمات فراہم کیں اور گذشتہ سال کے دوران 41 ہزار سے زائد مریضوں کا ان کے ڈاکٹروں اور نرسوں کے ہاتھوں علاج کیا گیا۔ بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ وہ ایک آزاد بین الاقوامی انسانی طبی امداد کی آرگنائزیشن ہے، جو ہر محتاج کو قطع نظر ان کی مذہبی، قبائلی اور سیاسی وابستگی کے انہیں طبی سہولیات فراہم کرتی ہے۔

      دریں اثناء مقامی ادارے کے وزیر اور یمنی امداد کی اعلی سطح کی کمیٹی کے سربراہ عبد الرقیب فتح نے کہا کہ "بلا سرحد ڈاکٹروں” کی تنظیم نے ملیشیاؤں کی جانب سے انہیں تنگ کرنے اور مسلح افراد کا ہسپتال میں داخل ہونے کی وجہ سے اب کے انقلاب ہسپتال سے جانے کا فیصلہ کیا ہے۔

جمعہ 25 جمادى الثانی 1438 ہجری­ 24 مارچ 2017ء   شمارہ: (13996)
شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>