ترکی اور کردی کشمکش کی شدت کی وجہ سے واشنگٹن بے چین - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: بدھ, 26 اپریل, 2017
0

ترکی اور کردی کشمکش کی شدت کی وجہ سے واشنگٹن بے چین

3

کل فوجی حملہ کے بعد مغربی شام کے شمال میں واقع کفر تخاریم گاؤں میں ہلاکت وبربادی کا ایک منظر

بیروت: بولا اسطیح

        شمالی شام کے علاقے میں واقع تنظیم داعش کے اڈہ رقہ شہر میں داخل ہونے کے لیے "شام کی ڈیموکریٹک فورسز” کی تیاری کے وقت ترکی اور کردی کشمکش سخت ہو گئی ہے اور انقرہ نے عراق اور شام دونوں جگہوں میں ایک ساتھ کردی جنگجوؤں کے اڈوں پر دسیوں حملہ کیا ہے۔

        ترکی حملہ نے حسکہ گورنریٹ میں واقع قرہ جوخ علاقہ کے ایک ریڈیو براڈکاسٹ کے مقامی اسٹیشن اور کردی فورسز کے ایک میڈیاء سنٹر کو نشانہ بنایا ہے جس میں کرد پوائنٹس کے 15 افراد اور میڈیاء سنٹر کے تین اہلکار ہلاک ہؤئے ہیں۔ اسی طرح ان حملوں میں عراق کے شامل میں کردی جنگجوؤں کو نشانہ بنایا گیا ہے اور ہیش مرگہ فورسز نے اپنے 6 اہلکار کے ہلاک ہونے کا اعلان کیا ہے۔

بدھ 29  رجب 1438ہجری –  26 اپریل  2017ء شمارہ نمبر {14029}

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>