مکہ مکرمہ میں مسجد حرام کے خلاف دہشت گردانہ کارروائی ناکام - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: ہفتہ, 24 جون, 2017
0

مکہ مکرمہ میں مسجد حرام کے خلاف دہشت گردانہ کارروائی ناکام

3 جگہ چھاپے کے دوران 5 افراد گرفتار۔۔۔ اور خود کش حملہ آور کا خود کو دھماکے سے اڑانے کے نتیجے میں 11 افراد زخمی

کل رات حرم مکہ مکرمہ کی فضا سے لی گئی تصویر جس میں لاکھوں لوگ ختم قرآن کریم میں شریک ہیں (تصوير: احمد حشاد)

 

مکہ مکرمہ: وجدی القرشی

      کل سعودی عرب کے حکام نے ختم قرآن کریم اور ماہ رمضان کی آخری تراویح کی رات مکہ مکرمہ میں مسجد حرام کو دہشت گردی کا نشانہ بنانے کے منصوبے کو ناکام بنا دیا ہے۔ دریں اثناء ایک خاتون سمیت 5 دہشت گردوں کو گرفتار کر لیا گیا ہے جبکہ چھٹے مطلوبہ شخص نے سیکورٹی فورسز کی جانب سے اس رہائشی عمارت کا محاصرہ کرنے پر خود کا دھماکے سے اڑا لیا، جس کے نتیجے میں 11 افراد زخمی ہوگئے۔

      سعودی عرب کی وزارت داخلہ کے ترجمان میجر جنرل منصور ترکی نے کہا ہے کہ سیکورٹی افراد نے "عمرہ کرنے والوں اور نمازیوں سے بھری مسجد حرام کو تین جگہوں پر موجود دہشت گرد گروپوں کی طرف سے دہشت گردی کا نشانہ بنانے کی کاروائی کو ناکام بنا دیا ہے”۔

      سعودی وزارت داخلہ نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ "دہشت گرد نیٹ ورک کے افراد اللہ تعالی کی سب سے مقدس مسجد حرام کی تمام تر حرمت اور اس کی سلامتی کے کو پامال کرتے ہوئے اسے اپنا ہدف بنانے کے لئے بیرون ملک سے منظم کردہ برائی و فساد پر مبنی منصوبے کی تکمیل کرنا چاہتا تھا جو اس پاک ملک کے استحکام کر خراب کرنا چاہتے ہیں”۔

ہفتہ 29 رمضان المبارک 1438ء­ 24 جون 2017ء  شمارہ: (14088)
الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>