"ہائیڈروجنی زلزلہ" ایٹمی جنگ کے خدشات میں اضافہ کر رہا ہے - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: پیر, 4 ستمبر, 2017
0

"ہائیڈروجنی زلزلہ” ایٹمی جنگ کے خدشات میں اضافہ کر رہا ہے

پیانگ یانگ کی دھمکیوں پر امریکہ کا فوجی ردعمل سے انتباہ

کل شمالی کوریا کی نیوز ایجنسی کی طرف سے تقسیم کی گئی تصویر جس میں رہنما کیم جونگ اون ایک نامعلوم جگہ پر فرضی جوہری ہتھیار کا معائنہ کر رہے ہیں (ا.ب۔ا)

سيول ـ واشنگٹن: "الشرق الاوسط”

      کل شمالی کوریا کے چھٹے جوہری تجربہ کے باعث جنوبی کوریا اور چین کے رہائشی افراد نے زلزلے کے جھٹکے محسوس کئے جس سے جوہری جنگ کے خدشات میں اضافہ ہو گیا ہے۔

      پیانگ یانگ نے امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ اور بین الاقوامی برادری کو ایک نئی دھمکی دیتے ہوئے زور دیا ہے کہ اس نے ہائیڈروجن بم کا "کامیاب ترین” تجربہ کیا ہے، جسے طویل المسافت میزائل پر لے جایا جا سکتا ہے۔ جبکہ زلزلے کی نگرانی کرنے والے غیر ملکی ذرائع کے مطابق شمالی کوریا کی جانب سے تجربہ کئے گئے مقام کے قریب زلزلے کی شدت 6٫3 رہی ہے۔ جنوبی کوریا کے ماہرین کا کہنا ہے کہ کل شمالی کوریا میں اس بار آنے والے "مصنوعی زلزلہ” پانچویں جوہری تجربہ کی بہ نسبت پانچ سے چھے گنا زیادہ طاقتور تھا، اس وقت پیانگ یانگ نے 10کیلوٹن وزنی بم کا دھماکہ کیا تھا۔

 

پیر – 13 ذی الحجة 1438 ہجری – 04 ستمبر 2017ء  شمارہ: [14160]
الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>