3 "داعشی" افراد کی تنظیم کے ساتھ منسلک ہونے کے بارے میں "الشرق الاوسط" سے گفتگو - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
غسان شربل
به قلم:
کو: منگل, 5 ستمبر, 2017
0

3 "داعشی” افراد کی تنظیم کے ساتھ منسلک ہونے کے بارے میں "الشرق الاوسط” سے گفتگو

امریکی شہری "ویڈیو” سے متاثر ہونے کے باعث – قازقستانی روزگار کے جھانسے میں – چینی شہری تنگی کے باعث تنظیم میں شامل ہوئے

اربیل جیل میں (امریکہ، چین، قازقستان، عراق اور شامی) "داعشی” افراد کی "الشرق الاوسط” سے گفتگو

 

اربيل: غسان شربل

      شام کی جنگ کے بارے میں سوشل میڈیا پر شائع کردہ خافناک تصاویر قریب اور بعید کے ممالک سے تعلق رکھنے والے نوجوانوں کے جذبات کو بھڑکانے میں کامیاب رہیں ہیں۔ چنانچہ کچھ لوگ اس پروپیگنڈا کی بدولت "داعش” کے چنگل میں آگئے، جس نے ان غیر ملکیوں کو شام اور عراق میں موجود نیٹ ورک میں شامل کر لیا۔

      عراقی شہر اربیل میں انسداد دہشت گردی سیل میں ایک چینی شہری س۔ق۔ک نے "الشرق الاوسط” کو اپنی داستان سنائی۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ چین میں مسلمانوں کو تنگ کئے جانے پر باغی ہوگیا اور اپنے خاندان کو مشرقی ترکستان سے ترکی لے گیا، جب ان کی بچت ختم ہوگئی تو ایک شخص نے انہیں شام میں "داعش” کے علاقوں میں منتقلی کے اخراجات ادا کرنے کی پیشکش کی۔ چنانچہ وہ انہیں الرقہ اور پھر وہاں سے تعلفر لے گئے جہاں اسے "ابو ہاجر ترکستانی کیمپ” میں شامل کر دیا گیا۔

      امریکی ر۔ک نے یوٹیوب پر ایک ویڈیو دیکھی تھی، جس میں ایک شامی خاتون اپنے بھائیوں کو بچانے کے لئے مسلمانوں کو پکار رہی ہے اور مدد کی اپیل کر رہی ہے۔ چنانچہ انہوں نے اپنی ڈاکٹر بیوی کو ساتھ لیا اور ترکی آ گیا۔ یہاں پر "داعش” کے نیٹ ورک نے انہیں اپنے ساتھ ملا کر الرقہ لے گئے۔

      اسی طرح "الشرق الاوسط” نے قوبلان اوزاق حسن کو قازقستان سے آئے تھے ان کی بھی کہانی سنی۔

 

منگل – 14 ذی الحجة 1438 ہجری – 05 ستمبر 2017ء  شمارہ: [14161]
شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>