کردی میمورنڈم کے ملتوی ہونے میں کوئی حیرت نہیں - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعہ, 15 ستمبر, 2017
0

کردی میمورنڈم کے ملتوی ہونے میں کوئی حیرت نہیں

کل زاخو میں میمورنڈم کے دعائی پروگرام کے دوران بارزانی اپنے ہمنواؤں کے درمیان

بغداد: "الشرق الاوسط”

         ایک امریکی فوجی ذمہ دار نے نیک شگونی کا ذکر کرتے ہوئے کہا ہے کہ عراق کے کردیوں کی طرف سے آزادی کے میمورنڈم کو ملتوی کئے جانے کو قبول کرنے کا احتمال ہے۔ کل تنظیم داعش کے خلاف اتحاد میں امریکہ کے خاص ایلچی بریٹ مکغورک نے کہا کہ وہ مطمئن ہیں کہ عراقی کردستان صوبہ کے رہنماء میمورنڈم کے ملتوی کئے جانے کے سلسلہ میں ان کی طرف سے پیش کردہ تجویز کو قبول کریں گے۔

        مکغورک نے ایک پریس کانفرنس کے دوران مزید کہا کہ 25 ستمبر کو ہونے والے میمورنڈم کے لئے ایک قدم بڑھانے کی وجہ سے فوجی کاروائی ہو سکتی ہے جس سے علاقہ کو زبردست نقصان پہنچے گا کیونکہ اس موجودہ وقت میں اسے بین الاقوامی تعاون بھی حاصل نہیں ہو سکتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہم علاقہ کے سیاسی رہنماؤں کو پرزور انداز میں کوئی متبادل راستہ اختیار کرنے کے سلسلہ میں ہمت افزائی کرتے ہیں جس میں گفت وشنید اور سنجیدہ گفتگو کا موقعہ ہو تاکہ اس کے ذریعہ بغداد کی مرکزی حکومت اور صوبہ کی حکومت کے پیچیدہ مسائل حل کئے جا سکیں۔

جمعہ – 24 ذی الحجة 1438 ہجری – 15 ستمبر 2017ء  شمارہ نمبر: (14170(

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>