واشنگٹن کی طرف سے اسد کے انجام کے سلسلہ میں دوبارہ گفت وشنید - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعہ, 27 اکتوبر, 2017
0

واشنگٹن کی طرف سے اسد کے انجام کے سلسلہ میں دوبارہ گفت وشنید

ڈی میسٹورا کی طرف سے جینوا مذاکرات کی تاریخ کا تعین اور اقوام متحدہ کی تحقیق میں  شامی حکومت خان شیخون کیمیائی حملہ کی ذمہ دار

کل جنیوا میں ٹیلرسون ڈی میسٹورا سے ملاقات کرتے ہوئے

لندن – جنیوا – نیویارک: "الشرق الاوسط”

        کل امریکی وزیر خارجہ ریکس ٹیلرسون نے بشار الاسد کے انجام سے متعلق دوبارہ گفت وشنید کرنے کی تجویز رکھی ہے کیونکہ اقوام متحدہ کے سفیر ڈی میسٹورا نے جنیوا میں ان سے ملاقات کرنے کے بعد کہا کہ ریاستہائے متحدہ امریکہ شام کو مکمل اور متحد دیکھنا چاہتا ہے اور اس کی حکومت میں اسد کا کوئی کردار نہیں ہوگا۔(۔۔۔)

        کل ڈی میسٹورا نے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی طرف پیش کردہ ایک مختصر پروگرام میں کہا کہ جنیوا مذاکرات کا اگلا مرحلہ 28 نومبر کو منعقد ہوگا۔(۔۔۔)

         اسی سلسلہ میں کل اقوام متحدہ کی تحقیقاتی ٹیم اور کیمیائی ہتھیاروں پر پابندی کی تنظیم کی طرف سے سلامتی کونسل کو پیش کردہ ایک رپورٹ نے پرزور انداز میں گزشتہ اپریل کو خان شیخون پر السارین نامی گیس کے ذریعہ کئے گئے کیمیائی حملہ کی ذمہ دار شامی حکومت کو ٹھہرایا ہے۔

جمعہ – 7 صفر 1439 ہجری – 27 اكتوبر 2017ء شمارہ نمبر: (14213)

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>