تہران زلزلے میں ہلاکتوں کا اعداد و شمار کر رہا ہے – اور بدترین ہلاکتوں کا اندیشہ - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: منگل, 14 نومبر, 2017
0

تہران زلزلے میں ہلاکتوں کا اعداد و شمار کر رہا ہے – اور بدترین ہلاکتوں کا اندیشہ

اکثر متاثرین کا تعلق حکومتی نئی رہائشی کالونی اور قریبی علاقوں میں ہیں

ایران کے مغرب میں پرسوں رات آنے والے زلزلے میں بچ جانے والے لوگ کل گورنریٹ کرمان شاہ کے راستے میں سربل کے علاقے میں حکومتی نئی رہائشی عمارتوں میں اپنا سامان تلاش کر رہے ہیں (ا۔ب۔ا)

 

لندن: "الشرق الاوسط”

      ایران کے مغربی علاقوں میں درجنوں شہروں اور دیہات اتوار کی رات زلزلے اور اس کے بعد تباہی و ہلاکتوں سے اٹھ کھڑے ہوئے، جبکہ ریکٹر سکیل پر زلزلے کی شدت 7٫3 تھی۔

      اگرچہ زلزلے کا مرکز کردستان عراق کا شہر حلبجہ تھا، لیکن اس کا زیادہ تر اثر ایران کے مغربی گورنریٹ کرمان شاہ میں ہوا جہاں کی اکثریت کرد ہے۔ سرکاری اعداد و شمار کے مطابق 445 اشخاص ہلاک اور 7 ہزار سے زائد افراد زخمی ہوئے ہے۔ جبکہ عراق میں 8 افراد ہلاک اور تقریبا 500 زخمی ہوئے ہیں۔

      ایران میں حکام کی جانب سے متاثرہ علاقوں میں ریسکو کی کاروائیوں کے آغاز کے اعلان کے چند گھنٹوں بعد ہلاکتوں میں بتدریج اضافہ ہوا ہے، جبکہ ریسکو ٹیموں کے پہنچنے میں دشواری کے باعث ہزاروں افراد پھنسے ہوئے ہیں۔ سربل کے شہر میں خاص طور پر حکومتی نئی رہائشی کالونی سب سے زیادہ متاثر ہوئی ہے، جہاں عمارتوں کے منہدم ہونے سے 250 سے زائد اشخاص ہلاک ہوئے ہیں۔

 

منگل – 25 صفر 1439 ہجری- 14 نومبر 2017ء  شمارہ: [14231]

 

 

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>