شامی حکومت اور ان کے اتحادی "موت کی مثلث" میں جمع ہو رہے ہیں - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: پیر, 11 دسمبر, 2017
0

شامی حکومت اور ان کے اتحادی "موت کی مثلث” میں جمع ہو رہے ہیں

خز علی کے ٹرائل کا مطالبہ، جنوبی لبنان میں عراقی "عوامی فورسز” کی ویڈیو

کل مشرق دمشق دوما میں قدس کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہوئے مظاہرہ (ا.ب.ا)

 

بيروت: نذير رضا

      شام کی حکومتی افواج اور ان کے اتحادی ملک کے جنوبی علاقوں درعا، قنیطرہ اور دمشق پر مشتمل "موت کی مثلث” میں جمع ہو رہے ہیں تاکہ "کم کشیدگی” والے علاقوں کے قیام کے معاہدے کے ضمن میں اسٹریٹجک علاقوں پر کنٹرول کی خاطر حملے کی تیاری کی جا سکے۔ (۔۔۔)

      دریں اثناء، سوشل میڈیا ویب سائیٹ پر ایک اور ویڈیو نشر کی گئی ہے جس میں عراقی "عوامی فورسز” سے الگ ہونے والے "سرایا السلام” کے عناصر کو جنوبی لبنان میں دکھایا گیا ہے۔

      یاد رہے کہ ویڈیو کی اشاعت اس وقت میں کی گئی ہے کہ جب "عصائب اہل الحق” کے کمانڈر قیس خز علی کا جنوب کی جانب دورہ کرنے پر رد عمل ختم نہیں ہوا تھا۔ لبنانی حکومت میں "مستقبل کی تحریک” کے ایک نمائندے وزیر محنت محمد کبارہ نے خز علی کو گرفتار کرنے اور ان کے ٹرائل کا مطالبہ کیا ہے، کیونکہ "انہوں نے لبنانی خودمختاری کی خلاف ورزی کی ہے”۔

 

پیر – 23 ربيع الأول 1439 ہجری – 11 دسمبر 2017ء  شمارہ: [14258]
الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>