غوطہ دمشق میں "حلب کے منظر نامہ" کے لئے روسی احاطہ - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: منگل, 20 فروری, 2018
0

غوطہ دمشق میں "حلب کے منظر نامہ” کے لئے روسی احاطہ

عفرین مفاہمت ماسکو کی منظوری کا منتظر ۔۔۔ اور شامی حکومتی افواج کا کردوں کی حمایت کرنے کی صورت میں انقرہ ان کے "خاتمے” کی دھمکی دے رہا ہے

شہری دفاع کا ایک کارکن کل غوطہ دمشق میں حموریہ پر شامی حکومتی افواج کی بمباری میں منہدم ہونے والی عمارت کے نیچے دب کر زخمی ہونے والے بچے کو اٹھائے ہوئے ہے (ا۔ف۔ب)

 

ماسکو: رائد جبر – انقرہ: سعید عبد الرازق

      ماسکو، غوطہ دمشق میں بڑے پیمانے پر زمینی حملہ کرنے کی راہ ہموار کر رہا ہے (۔۔۔)۔ روسی وزیر خارجہ سیرگی لافروف نے بیان دیا ہے کہ "دمشق کے جنوب میں مشرقی غوطہ کے علاقے میں مسلح دہشت گرد (نصرت فرنٹ) کے خلاف، حلب شہر کو دہشت گردوں سے آزاد کرائے جانے والے تجربہ کو لاگو کیا جا سکتا ہے”۔ (۔۔۔)

      دریں اثناء، یوں معلوم ہوتا ہے کہ شامی حکومت اور کرد عوامی حفاظتی یونٹس کے مابین مفاہمت ماسکو کی منظوری کی منتظر ہے۔ (۔۔۔)

      ترک وزیر نے بیان دیا ہے کہ "اگر شامی حکومت (عفرین) کے علاقے میں کرد لیبر پارٹی اور ڈیموکریٹک الائنس کے صفائے کی خاطر داخل ہوتی ہے تو کوئی مسٔلہ نہیں، لیکن اگر حکومتی فوج ان یونٹس کے دفاع کی خاطر آئے گی تو ایسی صورت میں کوئی چیز اور کوئی شخص ہمیں یا ترک افواج کو نہیں روک سکے گا”، انہوں نے دھمکی دیتے ہوئے کہا کہ عفرین میں مداخلت کرنے والی کسی طاقت کو "ختم” کر دیا جائے گا۔

 

منگل – 4 جمادى الآخرة 1439 ہجری – 20 فروری 2018ء  شمارہ: [14329]
الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>