ایرانی میزائل سعودی عرب کو ہدف بنا رہے ہیں - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
مشاری الذایدی
کو: بدھ, 28 مارچ, 2018
0

ایرانی میزائل سعودی عرب کو ہدف بنا رہے ہیں

 

مشاری الذایدی

       حوثی ایرانی میزائلوں والی رات؛ جس نے سعودی دارالحکومت ریاض اور دیگر شہروں کو اپنا نشانہ بنایا، اس سے جو باتیں واضح ہوتی ہیں وہ "یمن میں حوثیوں کے خلاف جنگ کیوں ہے، ان کی وہاں موجودگی کا مسٔلہ، حتمی اختیار، جنگ بندی کا مطالبہ یا اس کے کیا فوائد ہیں؟” شامل ہیں۔

       ہم دہشت گرد جماعت کے سامنے ہیں جو ایرانی خمینی پاسداران انقلاب کے تابع فرمان ہے۔ (۔۔۔)۔ جو واضح اعلان کرتی ہے کہ وہ سعودی عرب اور اس کی عوام کو ہلاک و برباد کرنا چاہتی ہے، جیسا کہ اس کا پیشوا تہران چاہتا ہے۔ یمن جنگ میں سعودی عرب اور عرب اسلامی اتحاد کی دلیل کا خلاصہ یہ ہے کہ یہ ہزارویں بار وضاحت ہے کہ یہ جنگ صرف سعودی رب کی جنگ نہیں بلکہ یہ بین الاقوامی قوانین کی روشنی میں عرب اسلامی اتحاد کی جنگ ہے۔ یہاں میں اس اتحاد کے ترجمان جنرل ترکی المالکی کی جانب سے پریس کانفرنس کے دوران دہ گئی دلیل کا خلاصہ بیان کرنا چاہونگا، انہوں نے کہا سعودی عرب کے شہروں پر بمباری کرنے کا حقیقی ذمہ دار ایران ہے، جبکہ حوثی فقط ایک فرضی نام ہے، جیسے انٹرنیٹ پر بات چیت کے لئے فرضی تعارف کا طریقہ اپنایا جاتا ہے۔

      ان سب کو ایران کی جانب امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی ٹیم جن میں نئے وزیر خارجہ مائک مومبیو، امریکی قومی سلامتی کے نئے مشیر جان بولٹن شامل ہیں ان کے سیاسی مزاج سے بالکل مطابقت کرتے ہوئے سعودی عرب امریکہ متحدہ عرب امارات کے مابین بڑھتے ہوئے تعاون کو دیکھا جائے، جیسا کہ حال ہی میں سعودی ولی عہد پرنس محمد بن سلمان کا ریاست ہائے متحدہ امریکہ کے جاری دورہ میں واضح طور پر دیکھا جا سکتا ہے۔

       یہاں ایران کا حوثیوں کو میزائل فراہم کرنے، پاسداران انقلاب کے آفیسر کو یمن بھیجنے یا شاید "حزب اللہ” لبنانی کے ماہرین کو بھی یمن بھیجنے اور اس مسٔلہ میں ایران کا کسی بھی انداز میں شامل ہونے کی حتمی دلیل ثابت ہوتی ہے۔ (۔۔۔)

       ایرانی میزائلوں کی بمباری کئے جانے والی رات کے بعد شاہ سلمان کی صدارت میں وزراء کونسل نے اپنے پہلے موقف میں زور دیا کہ: "یہ ایرانی حمایت یافتہ حوثی ملیشیاؤں کی جانب سے مجرمانہ جارحیت ہے جو ایرانی حکومت کی طرف سے حوثییوں کی مسلسل حمایت کو ثابت کرتا ہے (۔۔۔)۔”

          اتحاد کے ترجمان جنرل ترکی المالکی نے کہا کہ: "مملکت سعودیہ ایران کو جواب دینے کا حق اپنے پاس محفوظ رکھتا ہے”۔ امریکی وزارت دفاع کی خاتون ترجمان ریبیکا ریباریچ نے آخری میزائل حملوں پر بیان دیتے ہوئے ایران پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ  حوثیوں کو اسلحہ فراہم کر رہا ہے۔

       اور پھر: کیا یہ خمینی ایران کے علاقے میں میزائلوں کی بڑھتی ہوئی شورش ایک "بڑے تنازعہ” کی جانب لے جا رہی ہے؟

 

بدھ – 11 رجب 1439 ہجری – 28 مارچ 2018ء – شمارہ نمبر 14365
مشاری الذایدی

مشاری الذایدی

مشاری الذیدی (مولود 1970) کا شمار ایک ماہر صحافی، سیاسی تجزیہ نگار اور مضمون نگار کی حیثیت سے ہے، سعودیہ عربیہ کے رہنے والے ہیں اور فی الحال کویت میں مقیم ہیں، متوسط درجے کی کارکردگی اور مذہبی جذبات کے ساتھ ان کی فراغت سنہ1408 هـ میں ہوئی، وہ اسلامی سرگرمیوں، موسم گرما کے مراکز اور لائبریریوں میں پیش پیش رہے ہیں اور اسی کے ساتھ ساتھ مقامی عرب پریس، دیگر پروگرام اور اسلامی انتہاپسندی کے موجودہ مسائل پر ایک ماہر صحافی اور قلمکار کی حیثیت سے حصہ لیا ہے ۔

More Posts

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>