ٹرمپ اور پوٹن کے درمیان ہونے والے شام کے سمجھوتہ سے یورپی ممالک پریشان - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعہ, 29 جون, 2018
0

ٹرمپ اور پوٹن کے درمیان ہونے والے شام کے سمجھوتہ سے یورپی ممالک پریشان

"الشرق الاوسط” کے ساتھ مغربی ذرائع کی تاکید کہ ایران کو کمزور کرکے جنوب کی طرف انتظامیہ کی واپسی اور مخالف جماعتوں کی طرف سے "حزب اللہ” کے قیدیوں کے سلسلہ میں گفتگو

لندن: ابراہیم حمیدی

          مغربی سفارتی ذرائع نے کل "الشرق الاوسط” کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے اس بات کی تصدیق کی ہے کہ یورپی ممالک امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ اور روسی صدر ولادیمیر پوٹن کے درمیان ہونے والے اس ممکنہ سمجھوتہ کے سلسلہ میں غیر مطمئن ہیں جس کا اعلان 16 جولائی کو ہیلسنکی میں ہونے والے ان کے سربراہی اجلاس کے دوران ہوگا جبکہ شامی حکومت کی افواج جنوب کی طرف واپس ہو جائے گی اور اس کے مقابلہ میں مخالف جماعتوں کے جنگجو ادلب کی طرف واپس ہو جائیں گے اور جنوب سے ایران نکل جائے گا  پھر اسے کمزور کرنے کے بعد پورے شام سے اس کے کردار کو ختم کر دیا جائے گا۔(۔۔۔)

         اس دوران شامی مذاکرات کے سلسلہ میں مخالف تنظيم کے صدر نصر حریری نے شام کے جنوب میں قتل عام کو روکنے کا مطالبہ کیا ہے اور اس بات کی طرف بھی اشارہ کیا ہے کہ جنوب میں فوجی جماعتوں کے پاس "حزب اللہ” کے قیدی ہیں۔

جمعہ – 15 شوال المکرم 1439 ہجری – 29 جون 2018ء شمارہ نمبر:  (14358)

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>