مشرقی فرات میں ترکی کی طرف سے ہونے والا حملہ ملتوی - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: ہفتہ, 22 دسمبر, 2018
0

مشرقی فرات میں ترکی کی طرف سے ہونے والا حملہ ملتوی

کل الحسکہ کے دیہی علاقہ کے تل بدر نامی گاؤں کے قریب دو امریکی فوجی گاڑیوں کو دیکھا جا سکتا ہے

انقرہ: سعید عبد الرازق ۔ ماسکو: رائد جبر ۔ پیرس: مائکل ابو نجم

         کل ترکی صدر رجب طیب اردوگان نے شام سے اپنی فوج نکال لینے کے سلسلہ میں امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کی طرف سے کئے جانے والے اعلان کا استقبال کیا ہے اور انہوں نے اشارہ بھی کیا ہے کہ انہوں نے مشرقی فرات کے علاقوں پر حملہ کرنے کے فیصلہ کو ملتوی کر دیا ہے۔

       اردوگان نے اسطنبول میں اپنے خطاب کے دوان کہا کہ ان کا ملک شمالی شام کے اندر داعش کے اہلکار اور عوام کی حمایتی کرد یونٹس سے آزادی پانے کے سلسلہ میں کام کرے گا اور وہ شام میں داعش کے اہلکار سے چھٹکارا حاصل کرنے کے لئے معاہدہ کے مطابق چودہ مہینوں کے اندر ٹرمہ سے گفتگو کرکے منصوبہ بنانے کے انتظار میں ہیں۔

      اسی سلسلہ میں ترکی کے وزیر خارجہ مولود جایش اوگلو نے کہا کہ ہم پر ضروری ہے کہ ہم ریاستہائے متحدہ کے ساتھ واپسی کی ترتیب دیں اور ہم نے مختلف سطح پر براہ راست رابطہ قائم کیا ہے۔(۔۔۔)

ہفتہ 14 ربیع الثانی 1440 ہجری – 22 دسمبر 2018ء – شمارہ نمبر [14634]

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>