حدیدہ کے گورنر کی طرف سے حوثیوں پر جنگ میں ایک ہزار بچوں کو شامل کرنے کا الزام - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: ہفتہ, 26 جنوری, 2019
0

حدیدہ کے گورنر کی طرف سے حوثیوں پر جنگ میں ایک ہزار بچوں کو شامل کرنے کا الزام

حدیدہ میں حوثی جنگجؤوں کو دیکھا جا سکتا ہے

جدہ: سعید الابیض

          حدیدہ کے گورنر ڈاکٹر حسن الطاہر نے حوثیون پر گذشتہ چند دنوں کے دوران شمالی جانب سے حدیدہ کے لئے تقریبا ایک ہزار بچوں کو جنگ میں شامل کرنے کا الزام عائد کیا ہے۔

        "الشرق الاوسط” کے ساتھ فون کے ذریعہ ہونے والی گفتگو میں الطاہر نے واضح کیا کہ حدیدہ میں دوبارہ فورس متعین کرنے کی کمیٹی کے صدر جنرل پیٹریک کومارٹ کے پہنچنے کے وقت سے اب تک ذمہ دار ادارے نے ہر جانب خلاف ورزیوں کی نسبت میں اضافہ ہونے کا اندازہ لگایا ہے اور انہیں خلاف ورزیوں میں جنگجؤوں کو شامل کرنا ہے اور ان میں سب سے بڑی خلاف ورزی ایک ہزار بچوں کو شامل کرنا ہے اور اسی طرح میلیشیاؤں نے حدیدہ کے مختلف مقامات پر اپنے جنگجؤوں کو متعین کر دیا ہے۔

        الطاہر نے کہا کہ باغی میلیشیائیں گذشتہ اوقات میں حدیدہ کے شہریوں اور تہامہ کے باشندوں کو جنگ میں شامل کرنے کے سلسلہ میں ناکام ہوئیں ہیں کیونکہ یہ لوگ سمجھتے ہیں کہ ان میلیشیاؤں کے عقائد ان سے بہت مختلف ہیں اور اسی طرح یہ میلیشیائیں ایسے علاقہ کے قیام کے سلسلہ میں بھی ناکام ہوئیں ہیں جہاں وہ بچوں کو غیر معمولی اجرت کے ذریعہ اہم فوجی جگہوں کی انتظامیہ کے لئے آنے والے مرحلوں میں استعمال کر سکیں اور انہوں نے یہ قدم اس لئے اٹھایا کہ یہ علاقے ان کے ماتحت ہیں۔(۔۔۔)

ہفتہ 20 جمادی الاول 1440 ہجری – 26 جنوری 2019ء – شمارہ نمبر [14669]

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>