امریکی کمی کو مکمل کرنے کے لئے مشرقی شام میں ایران کی نقل وحرکت - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعرات, 7 فروری, 2019
0

امریکی کمی کو مکمل کرنے کے لئے مشرقی شام میں ایران کی نقل وحرکت

کل واشنگٹن میں داعش کے خلاف اتحاد میں شرکت کرنے والے ممالک کے وزرائے خارجہ کے اجلاس کے افتتاح کے وقت پومپیو کو دیکھا جا سکتا ہے

واشنگٹن: ہبہ القدسی ماسکو: رائد جبر

         ایران نے امریکی انخلاء کے بعد ہونے والی کمی کو پر کرنے کی کوشش میں مشرقی شام کے اندر اپنے میلیشیاؤں کے اہلکار کو فوجی بھرتے کرنے کے لئے میدانی نقل وحرکت کو بہت زیادہ بڑھا دیا ہے اور حقوق انسان کی شامی رصدگاہ نے بتایا ہے کہ ایرانی وفد نے میادین نامی شہر کا دورہ کر کے شہر اور گاؤں کے نوجوانوں کو اپنے علاقہ کی طرف واپس ہونے اور ایرانی فورسز وہم نواں میلیشیاؤں کی صف میں شامل ہونے پر آمادہ کیا ہے۔

        یہ دورہ اس وقت ہوا جب راستوں اور شہروں کو بنانے والے ایرانی وزیر محمد اسلامی نے ایک ایسے تیز راستہ کا افتتاح کیا جو مغربی ایران کے کرمان شاہ علاقہ کو مشرقی شام کے حمیل نامی شہر سے جوڑتی ہے اور کل تہران نے شام کے اس وزیر خارجہ ولید معلم کا استقبال کیا جنہوں نے اقتصادی تعاون کو جاری کرنے کے لئے ایرانی صدر حسن روحانی سے ملاقات کی ہے۔

        اسی سلسلہ میں ایرانی وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے روسی ذرائع ابلاغ کو بتایا کہ ان کا ملک دمشق اور انقرہ کے درمیان ثالثی کا کردار ادا کرنے کی کوشش کرے گا اور ایک پرامن علاقہ قائم کرنے کے سلسلہ میں انقرہ کے اصرار پر غیر مباشر انداز میں تنقید کرتے ہوئے ظریف نے کہا کہ ایک استعمار کو دوسرے استعمار کی جگہ قبول نہیں کیا جا سکتا ہے۔

جمعرات 02 جمادی الآخر 1440 ہجری – 07 فروری 2019ء – شمارہ نمبر [14681]

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>