اسٹکہولم معاہدہ نافذ نہ ہونے کی وجہ سے اقوام متحدہ میں بے چینی - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: جمعہ, 19 اپریل, 2019
0

اسٹکہولم معاہدہ نافذ نہ ہونے کی وجہ سے اقوام متحدہ میں بے چینی

الشرق الاوسط کے ساتھ گفتگو کرتے ہوئے العلیمی کو دیکھا جا سکتا ہے

نیویارک: علی بردی ۔ ریاض: عبد الہادی حبتور

       سیکیورٹی کمیٹی نے گذشتہ سال کے آخر میں حوثی جماعت اور یمنی حکومت کے درمیان ہونے والے اسٹکہولم معاہدہ کے نفاذ نہ ہونے کے سلسلہ میں اپنی بے چینی کا اظہار کیا ہے اور اس تشدد کے اعمال سے آگاہ کیا ہے جن کی وجہ سے حدیدہ کے اندر جنگ بندی کا ماحول ختم ہو سکتا ہے اور اس میں اشارہ ان پامالیوں کی طرف ہے جو حوثی میلیشیائیں ساحلی شہر میں کر رہے ہیں۔

      کمیٹی کے پندرہ اراکین نے اجماعی طور پر اس بیان پر اتفاق کیا ہے جس میں انہوں نے اپنی بے چینی کا اظہار کیا ہے کہ اسٹکہولم معاہدہ کے چار ماہ کے بعد اب تک اس کا نفاذ نہیں ہوا ہے۔(۔۔۔(

        اسی سلسلہ میں یمن کی قومی سیاسی فورسز اتحاد کے صدر رشاد العلیمی نے الشرق الاوسط کے ساتھ ہونے والی گفتگو میں پرزور انداز میں کہا کہ حوثی عوام سے علیحدہ زندگی گزار رہے ہیں لیکن انہوں نے اس بات کا اعتراف کیا کہ حوثی میلیشیاؤں نے ملک کے پارٹیوں کی کشمکش سے فائدہ اٹھایا ہے اور ہمارے ملک میں ایرانی منصوبہ کے مفاد میں اس کا استعمال کیا ہے۔(۔۔۔)

جمعہ 14 شعبان المعظم 1440 ہجری – 19 اپریل 2019ء – شمارہ نمبر [14752]

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>