عون کی طرف سے یورپ کو پناہگزینوں کی واپسی کے سلسلہ میں دمشق کے ساتھ ہونے والے معاہدہ کا اشارہ - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: ہفتہ, 4 مئی, 2019
0

عون کی طرف سے یورپ کو پناہگزینوں کی واپسی کے سلسلہ میں دمشق کے ساتھ ہونے والے معاہدہ کا اشارہ

کل صدر مایکل عون کو اسپین کے وزیر خارجہ کا استقبال کرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے

بیروت: خلیل فلیحان

      لبنانی صدر مائکل عون نے شامی پناہگزینون کی واپسی کو منظم کرنے کے سلسلہ میں دمشق کے ساتھ ہونے والے معاہدہ کا اشارہ اس شرط کے ساتھ کیا ہے کہ یورپ اقوام متحدہ کی نگرانی میں ان کی واپسی کو آسان بنانے کے اپنے رویہ کو تبدیل نہ کرے۔

     عون نے اسپینی تعاون، یورپ یونین کے مسائل اور اسپین کے وزیر خارجہ جوزف پوریل فونٹییس کے ساتھ ہونے والی ملاقات کے دوران اپنے افسوس کا اظہار کیا کیونکہ یورپ یونین شامی پناہگزینوں کی اپنے ملک واپسی کے سلسلہ میں حوصلہ افزا رویہ اختیار نہیں کر رہی ہے اور انہوں نے اس بات کی طرف بھی اشارہ کیا کہ لبنان یورپ یونین کے رویہ کی تبدیلی کا خواہاں ہے تاکہ بین الاقوامی سماج کی نگرانی میں ان کی واپسی آسان ہو سکے تاکہ لبنان کے تمام علاقوں میں اس نقل مکانی کے مضمرات کے سلسلہ میں حالات سخت نہ ہوں اور وہ شامی انتظامیہ کے ساتھ واپسی کو منطم کرنے کے لیے منصبوے بنانے پر مجبور نہ ہوں۔(۔۔۔)

ہفتہ 29 شعبان المعظم 1440 ہجری – 04 مئی 2019ء – شمارہ نمبر [14767]

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>