خرطوم میں ایک خون ریز دن اور عوامی غصہ کے بعد ہر چیز درہم برہم - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: منگل, 4 جون, 2019
0

خرطوم میں ایک خون ریز دن اور عوامی غصہ کے بعد ہر چیز درہم برہم

کل دھرنہ ختم کئے جانے کے بعد خرطوم میں فوجی ہیڈکواٹر سے قریب ایک سڑک کو جام کرتے ہوئے ایک شخص کو دیکھا جا سکتا ہے

خرطوم: محمد امین یاسین ۔ لندن: مصطفی سری

      کل کا دن خرطوم کا خونریز دن اس وقت بن گیا جب فوجی ہیڈکواٹر کے سامنے دھرنہ کے خلاف سیکیورٹی فورسز حرکت میں آکر اس دھرنہ کو قوت سے ختم کیا اور اس کاروائی کی وجہ سے دسیوں افراد ہلاک اور سیکڑوں افراد زخمی ہوئے ہیں اور جو کچھ ہوا اس کے سلسلہ میں انتقالی فوجی کمیٹی کی طرف سے اپنے افسوس کا اظہار کرنے کے باوجود اس تحریک کی روح رواں آزادی اور تبدیلی کے رہنماؤں نے سول حکومت کا مطالبہ کیا اور فوجی کمیٹی کے ساتھ مذاکرہ کو مسترد کیا اور اسی طرح عوامی ناراضگی نے دار الحکومت کے ہر کام کو درہم برہم کرنے کا اعلان کیا۔

     فوجی کمیٹی کے ترجمان کرنل شمس الدین کباشی نے کہا کہ دھرنہ کے میدان میں اس فوجی کاروائی کے ذریعہ قانون سے نکلنے والے کو نشانہ بنایا گیا ہے اور اسی وقت اس بات کی بھی نفی کی کہ اس نے خرطوم کے اندر طاقت کے ذریعہ دھرنہ کو ختم کرنے کے سلسلہ میں قدام کیا ہو اور اس بات کی بھی تاکید کی کہ وہ ملک اور شہریوں کی امن وسلامتی کا خواہاں ہے۔(۔۔۔)

منگل 30 رمضان المبارک 1440 ہجری – 04 جون 2019ء – شمارہ نمبر [14798]

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>