جبیر: حملوں کی تعیین ہونےکے بعد ہم جواب دیں گے - الشرق الاوسط اردوالشرق الاوسط اردو
الشرق اردو
به قلم:
کو: اتوار, 22 ستمبر, 2019
0

جبیر: حملوں کی تعیین ہونےکے بعد ہم جواب دیں گے

عادل جبير كل كى پريس كانفرنس كے دوران (الف.ب.الف)

امریکی دفاعی فورسز اور اسلحہ خلیج کی طرف روانہ۔۔۔ طہران کی طرف سے واشنگٹن کو "مہم جوئیوں”  سے انتباہ 

ریاض: عبد الہادی حبتور – واشنگٹن۔ لندن: ” الشرق الاوسط”

   سعودی خارجہ پالیسیوں کے وزیر عادل جبیر نے کل پرزور انداز میں کہا ہے کہ ان کا ملک ان حملوں سے متعلق تحقیقات  مکمل ہوتے ہی مناسب شکل میں جواب دے گا جن سے  گزشتہ ہفتے بقیق اور خریص میں واقع ” ارامکو” کمپنی  کی سہولیات کو نقصان پہنچا ہے ۔

       وزیر جبیر نے کہا ہے کہ دوسرے ممالک اور اقوام متحدہ کی مشارکت میں سعودی عرب کی طرف سے ہورہی تحقیقات فی الحال اس نقطہ کی تعیین کرنے کا کام کررہی ہے جہاں سے یہ حملے ہوۓ ہیں، انہوں نے اس بات کا بھی ذکر کیا ہے کہ لانچ یمن کی طرف سے نہیں ہوا ہے بلکہ ملک کے شمال کی طرف سے ہوا ہے۔

 ریاض میں منعقد ہونے والے ایک پریس کانفرنس کے دوران جبیر نے حملے کی ذمہ داری ایران پر ڈالی ہے ، اور پرزور انداز میں کہا ہے کہ اس حملے نے صرف سعودی عرب کو ہی نہیں بلکہ پوری دنیا کو نشانہ بنایا ہے، ” اس کا اثر عالمی تیل کی سپلائی پر پڑ رہا ہے ، اور دنیا کی توانائی سیکیورٹی کو نشانہ بن رہی ہے”. اور انہوں نے مزید یہ بھی کہا ہے کہ ” یہ حملہ بے مثال ہے ، یہ انسانیت پر حملہ ہے ، غیر منصفانہ جارحانہ دہشتگردی ہے، اسی وجہ سے 80 سے زائد ملکوں نے اسکی بڑی سخت مذمت کی ہے۔ (اتوار 23 محرم 1441 ہجرى/ 22 سبتمبر 2019ء شماره نمبر 14908)

الشرق اردو

الشرق اردو

«الشرق الاوسط» چار براعظموں کے 12 شہروں میں بیک وقت شائع ہونے والا دنیا کا نمایاں ترین روزنامہ عربی اخبار ہے، 1978ء میں لندن كي سرزميں پر میں شروع ہونے والا الشرق الاوسط آج عرب اور بین الاقوامی امور ميں نمایاں مقام حاصل كر چکا ہے جو اپنے پڑھنے والوں کے لئے تفصیلی تجزیے اور اداریے کے ساتھ ساتھ پوری عرب دنیا کی جامع ترین معلومات پیش کرتا ہے- «الشرق الاوسط» دنیا کے کئی بڑے شہروں میں بیک وقت سیٹلائٹ کے ذریعہ منتقل ہونے والا عربی زبان کا پہلا روزنامہ اخبار ہے، جیسا کہ اس وقت یہ واحد اخبار ہے جسے عظیم الشان بین الاقوامی اداروں کے لئے عربی زبان میں شائع ہونے کے حقوق حاصل ہیں جہاں سے «واشنگٹن پوسٹ»،

More Posts - Website - Twitter - Facebook

شيئر

تبصرہ کریں

XHTML/HTML <a href="" title=""> <abbr title=""> <acronym title=""> <b> <blockquote cite=""> <cite> <code> <del datetime=""> <em> <i> <q cite=""> <s> <strike> <strong>