حکومت اور اپوزیشن باری باری شام کی آئینی صدارت کے ذمہ دار ہیں

حکومت اور اپوزیشن باری باری شام کی آئینی صدارت کے ذمہ دار ہیں

اتوار, 3 November, 2019 - 15:15
جنیوا میں اقوام متحدہ کے سفیر گیئر پیڈرسن کو حزب اختلاف کے وفد کے سربراہ ہادی البحرہ (دائیں) اور حکومت کے وفد کے سربراہ احمد الكزبري کے مابین دیکھا جا سکتا ہے
        جنیوا میں منعقدہ شام کی آئینی کمیٹی کے اجلاسات کے پہلے ہفتہ کے اختتام کے وقت اقوام متحدہ کے سفیر گیر بیدرسن نے دو معاملہ کو پایہ تکمیل تک پہنچایا ہے جن میں سے ایک ضابطہ اخلاق نامی دستاویز کے سلسلہ میں اتفاق رائے قائم کرنا ہے اور آئینی اصلاح کے لئے چھوٹی کمیٹی کی تشکیل ہے۔
       اشارہ یہ تھا کہ شرکت کرنے والوں کی گفتگو میں شامی صدر بشار الاسد سے متعلق کوئی براہ راست گفتگو نہیں ہوگی کیونکہ حکومت کی طرف سے مدد کردہ وفد ہونے کا دعوی کرنے والے وفد نے مغربی پابندیاں ہٹائے جانے کے مطالبہ کے ساتھ فوج اور حکومت کے اداروں کی مدد اور شام کی خودمختاری پر اپنی توجہ مرکوز کیا تھا جبکہ اپوزیشن کے ترجمان نے آئینی اصلاح، تبدیلی اور غیر مرکزیت کی طرف اشارہ کیا ہے۔
       بیدرسن نے پہلے معاملہ کو مکمل کرنے کی بھر پور کوشش ہے اور یاد رہے کہ یہ معاملہ اس ضابطہ اخلاق کے سلسلہ میں اتفاق کرنا ہے جس میں ایک دوسرے کے احترام کے ساتھ گفت وشنید کی جائے اور کمیٹی کے اجلاسات کی صدارت مشترکہ طور پر باری باری کبھی حکومت کے پاس ہو اور کبھی اپوزیشن کے پاس ہو۔(۔۔۔)

انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا