سوڈان میں 1989 کی بغاوت کے مقدمہ کی سماعت

سوڈان میں 1989 کی بغاوت کے مقدمہ کی سماعت

ریسکیو کے رہنماؤں کے خلاف گرفتاری اور سفر کی پابندی کے وارنٹ جاری
بدھ, 13 November, 2019 - 12:00
1989 کی بغاوت کے رہنماء بشیر کو دیکھا جا سکتا ہے
         سوڈان نے سنہ 1989 میں ہونے والی بغاوت کے مقدمہ کی سماعت کا آغاز کر دیا ہے کیونکہ پبلک پراسیکیوشن نے ریسکیو بغاوت کے مرتکب افراد کے خلاف گرفتاری اور سفر کی پابندی کے سلسلہ میں وارنٹ جاری کر دیا ہے اور ان کے خلاف ایسے الزامات لگائے کئے ہیں جن کی سزا موت ہے۔
         پراسیکیوشن نے جیل انتظامیہ سے برخاست صدر عمر البشیر اور ان کی حکومت کے متعدد زیر حراست رہنماؤں کے حوالے کرنے کا مطالبہ کیا ہے اور اسی طرح بغاوت کی قیادت کے ممبروں کی گرفتاری کا وارنٹ جاری کیا ہے اور ان کے بیرون ملک کے سفر پر پابندی بھی عائد کردی ہے۔
         سابقہ ​​دور حکومت کے رہنماؤں کو 30 جون 1989 کو منتخب ہونے والی جمہوری حکومت کے خلاف فوجی بغاوت کے ذریعے اقتدار حاصل کرنے آئینی حکم کو مجروح کرنے جیسے الزامات کا سامنا ہے۔
بدھ 16 ربیع الاول 1441 ہجرى - 13 نومبر 2019ء شماره نمبر [14960]

انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا