شامی آئین کو ضامنوں کی طرف منتقل کرنے کے لئے دباؤ

شامی آئین کو ضامنوں کی طرف منتقل کرنے کے لئے دباؤ

اتوار, 1 December, 2019 - 17:15
گذشتہ جمعہ کو جنیوا میں آئینی کمیشن کے اجلاس کے دوسرے مرحلہ کے اختتام پر اقوام متحدہ کے ایلچی جییر پیڈرسن کو دیکھا جا سکتا ہے(اے ایف پی)
         شام کی آئینی اصلاحاتی ٹرین کے آغاز کے سلسلہ میں خوشی کی لہر اس وقت ختم ہوگئی جب آئینی کمیٹی کے اجلاسوں کا دوسرا مرحلہ جمعہ کے روز ختم ہو گیا لیکن اس سال کے اختتام سے پہلے تیسرے دور کے ایجنڈے کے سلسلہ میں کوئی اتفاق نہیڑ ہو سکا اور یہ سمجھا جا رہا ہے کہ ماسکو اور دمشق آستانہ - سوچی کاروائی  کے سیاسی کام کو تین ضامن کے حوالہ کرنا چاہتا ہے اور وہ روس ، ترکی اور ایران جیسے ممالک ہیں۔
         آئینی مذاکرات کے پہلے ہفتے میں دو کامیابیاں دیکھنے میں آئی ہیں ان میں سے پہلی یہ ہے کہ دونوں سرکاری وفود اور شام کے مذاکراتی ادارہ کے مابین ضابطۂ اخلاق پر معاہدہ ہوا اور دوسری کامیابی آئین کا مسودہ تیار کرنے کے لئے 45 رکنی منی کمیٹی کی تشکیل ہو گئی ہے۔(۔۔۔)
اتوار 4 ربیع الآخر 1441 ہجرى - 01 دسمبر 2019ء شماره نمبر [14977]

انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا