حکومت فخفاخ کی قیادت میں اور سیاسی استحکام کی چاہت

حکومت فخفاخ کی قیادت میں اور سیاسی استحکام کی چاہت

ہفتہ, 29 February, 2020 - 16:30
نگراں حکومت کے صدر یوسف الشاہد کو نئے وزیر اعظم الیاس الفخفاخ کو اقتدار سونپتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے (اے ایف پی)
الیاس الفخفاخ کا اپنے پیشرو صدر یوسف الشاہد سے باضابطہ طور پر اپنے فرائض سنبھالنے کے بعد تیونس کی نئی حکومت نے اپنے کام کے پروگرام پر عمل درآمد شروع کر دیا ہے اور اب کچھ مبصرین کے مطابق اس حکومت کی توجہ بھاری فائلوں پر ہے اور ان میں سب سے اہم معاشی، معاشرتی، بے روزگاری کا مقابلہ کرنے، سرمایہ کاری کو لانے اور معیشت کو بحال کرنے کی فائلیں ہیں۔
دار الحکومت کے شمالی مضافاتی علاقے میں واقع قرطاج کے گیسٹ ہاؤس میں حکومت حوالہ کرنے کی تقریب کا انعقاد کیا گیا ہے جس میں تحلیل ہونے والی سرکاری ٹیم نے شرکت کی ہے اور ان میں سرفہرست شاہد، نئی حکومتی ٹیم کے صدر فخفاخ، پارلیمنٹ کے اسپیکر راشد غنوشي، قومی تنظیموں اور قومی اداروں کے نمائندوں اور سیاسی جماعتوں کے نمائندوں کی ایک بڑی تعداد کے ساتھ ساتھ سیاسی جماعتوں کے نمائندوں کی ایک تعداد بھی تھی جبکہ تیونس لیبر یونین (ٹریڈ یونین) کے نمائندوں کی نمایاں عدم موجودگی بھی رہی ہے۔
فخفاخ نے تیونسیوں سے سیاسی استحکام کی حمایت کرنے کے لئے کہا ہے اور انہوں نے اس بات کی طرف اشارہ کیا ہے کہ سرکاری پروگرام کو پورا کرنے کے مقصد سے حکومت کے لئے ایک سال کی مدت کافی نہیں ہے اور ہم سب کو تعاون کرنا ہوگا کیونکہ تیونس کو بچانا ہمارا مقصد ہے اور انہوں نے اس حکومت میں جرم اور قانون کا احترام نہ کرنے کے خلاف مزاحمت، اعلی قیمتوں، دھوکہ دہی کے خلاف مزاحمت، مہذب زندگی کی ضروریات کی فراہمی، اجارہ داروں اور اسمگلنگ کے خلاف مزاحمت اور تقسیم کے راستوں کی نگرانی کے ساتھ ساتھ معیشت کو بحال کرنے کو اولین ترجیح دی ہے۔(۔۔۔)
ہفتہ 06 رجب المرجب 1441 ہجرى - 29 فروری 2020ء شماره نمبر [15068]

انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا