پرسکون ماحول کے لئے حفتر کے ذریعہ ترکی اور کرائے کے جنگجوؤں کے نکلنے کی شرط

پرسکون ماحول کے لئے حفتر کے ذریعہ ترکی اور کرائے کے جنگجوؤں کے نکلنے کی شرط

پیر, 16 March, 2020 - 13:15
کل دار الحکومت طرابلس کے نواح میں السراج کی حکومت کے ملیشیاؤں کو دیکھا جا سکتا ہے (اے ایف پی)

گزشتہ روز فیلڈ مارشل خلیفہ حفتر کی سربراہی میں لیبیا کی قومی فوج کے ترجمان نے اعلان کیا ہے کہ وہ لیبیا کے دار الحکومت طرابلس میں فائز السراج کی سربراہی میں الوفاق حکومت کے سامنے جنگ بندی کی تیاری کر رہے ہیں لیکن اس سلسلہ میں شرط ہے کہ ترک افواج لیبیا چھوڑ دیں۔
فرانسیسی پریس ایجنسی نے قاہرہ میں ہونے والے ایک پریس کانفرنس میں میجر جنرل احمد المسماری کی گفتگو کو نقل کیا ہے جس میں انہوں نے کا ہے کہ وہ اس شرط پر جنگ بندی کے لئے تیار ہیں کہ انقرہ کے ذریعہ لیبیا لائے گئے کرائے کے جنگجو اور ترکی کی فوجیں یہاں سے روانہ ہو جائیں۔
ترکی کے صدر رجب طیب اروغان نے گزشتہ سال کے آخر میں انقرہ کے ذریعہ نومبر کے ماہ میں وفاقی حکومت کے ساتھ ہونے والے ان دو معاہدوں کی بنیاد پر ترک فوجیوں کو لیبیا بھیجنا شروع کو دیا تھا اور یاد رہے کہ ان دو معاہدوں میں ایک فوجی معاہدہ ہے اور اسی کی بنیاد پر ترکی اسے فوجی امداد مہیا کر سکتا ہے اور دوسرا معاہدہ لیبیا اور ترکی کے درمیان سمندری سرحد کی حد بندی سے متعلق ہے۔(۔۔۔)

پیر 21 رجب المرجب 1441 ہجرى - 16 مارچ 2020ء شماره نمبر [15084]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا