شام کی سب سے اعلی فوجی اتھارٹی پر اقوام متحدہ کی طرف سے "کیمیکل" استعمال کرنے کا الزام عائد

شام کی سب سے اعلی فوجی اتھارٹی پر اقوام متحدہ کی طرف سے "کیمیکل" استعمال کرنے کا الزام عائد

جمعرات, 9 April, 2020 - 11:30
کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کے بعد امریکی اور اتحادی افواج کی زد میں آنے کے بعد دمشق کے مضافات میں برزہ سنٹر برائے سائنسی تحقیق کو دیکھا جا سکتا ہے (روئٹر)
بین الاقوامی تفتیش کاروں نے گزشتہ روز شام کے اعلی ترین فوجی اتھارٹی پر الزام لگایا ہے کہ اس نے 3 سال قبل ملک کے وسط میں واقع حماۃ کے دیہی علاقوں میں کیمیکل ہتھیاروں کے استعمال کرنے کا فیصلہ کیا تھا اور دمشق کے خلاف اقوام متحدہ کی طرف سے یہ اپنی نوعیت کا پہلا الزام ہے ۔
گوشتہ روز لاہائی میں کیمیکل ہتھیاروں کی ممانعت کی تنظیم کی تحقیقاتی ٹیم کے کوآرڈینیٹرسینٹیاگو اوناتی لیبارڈے نے کہا ہے کہ ان کی ٹیم کو یقینی طور پر وہ دلائل ملے ہیں جن کی بنیاد پر یہ یقین کے ساتھ کہا جا سکتا ہے کہ 24 اور 30 ​​مارچ 2017 کو حماۃ کے دیہی علاقوں میں کیمیکل ہتھیاروں اور 25 مارچ 2017 کو کلورین کا استعمال کرنے والے وہ افراد ہیں جو شام کی فضائیہ سے وابستہ ہیں اور اوناتی نے مزید کہا کہ اس انداز میں اسٹریٹجک حملے صرف شام میں فوجی قیادت میں اعلی حکام کے حکم پر ہی ہو سکتے ہیں۔(۔۔۔)
جمعرات 16 شعبان المعظم 1441 ہجرى - 09 اپریل 2020ء شماره نمبر [15108]

انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا