واشنگٹن اور بیجنگ کے تعلقات میں ایک نیا بگاڑ

واشنگٹن اور بیجنگ کے تعلقات میں ایک نیا بگاڑ

جمعرات, 23 July, 2020 - 12:15
ہیوسٹن میں چینی قونصل خانے کے چاروں طرف آگ بجھانے والی گاڑیوں کو دیکھا جا سکتا ہے اور یہ خیال ہے کہ آگ لگنے کی وجہ درجہ بند دستاویزات کو تباہ کرنا ہے (اے پی)
صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کی جانب سے گزشتہ روز ہیوسٹن میں چینی قونصل خانے کو بند کرنے کے احکامات اس الزام کے ساتھ جارے کئے گئے ہیں کہ چینی ملازمین نے امریکی دفاعی راز چوری کیا ہے اور اس کے بعد تو امریکہ اور چین کے تعلقات نے بگاڑ کی طرف تیزی سے ایک نیا رخ لے لیا ہے جبکہ قونصل خانے کے اندر سے آگ کا دھواں اٹھتا ہوا دیکھا گیا ہے جس کے بارے میں کچھ کا خیال ہے کہ قونصل خانہ نے آفیشل کاغذات اور دستاویزات کو جلا دیا ہے اور فائر فائٹرز کو داخل ہونے سے منع بھی کیا ہے۔

محکمہ خارجہ کی ترجمان مورگن اورٹاگوس نے اعلان کیا ہے کہ ان کے ملک نے امریکی دانشورانہ املاک اور امریکیوں کے بارے میں معلومات کے تحفظ کے لئے ہیوسٹن میں چینی قونصل خانہ کو بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔


اسی سلسلہ میں امریکی سینیٹ کی انٹلیجنس کمیٹی کے سربراہ مارکو روبیو نے کہا ہے کہ ہیوسٹن میں چینی قونصل خانہ جاسوسی کے وسیع نیٹ ورک اور ریاستہائے متحدہ میں چین کی کمیونسٹ پارٹی کی کاروائیوں کا مرکز ہے۔(۔۔۔)


جمعرات 02 ذی الحجہ 1441 ہجرى - 23 جولائی 2020ء شماره نمبر [15213]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا