"اخوان المسلمین" کے خلاف اردن میں اساتذہ کے مظاہروں کو مشتعل کرنے کا الزام

"اخوان المسلمین" کے خلاف اردن میں اساتذہ کے مظاہروں کو مشتعل کرنے کا الزام

بدھ, 5 August, 2020 - 13:15
ایک طرف اساتذہ نے پیر کے شام ایک سے زیادہ اردنی گورنریٹ میں ریلیاں نکالی ہیں جس کے دوران انہوں نے اپنی یونین کونسل سے نظربندوں کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے تو دوسری طرف سرکاری ذرائع سے لیک ہونے والی معلومات کے سلسلہ میں اخوان المسلمون کے رہنماؤں پر الزام لگایا گیا ہے کہ وہی اساتذہ کو ملک میں بغیر لائسنس گروپ کے متحرک کررہے ہیں اور اساتذہ یونین کی شاخوں کے ذریعے کام کررہے ہیں۔

سیکیورٹی خدمات نے ان گرفتاریوں کا آغاز کیا ہے جن میں وہ خواتین اساتذہ بھی شامل ہیں جنہوں نے ارد گورنریٹ (عمان سے 80 کلومیٹر شمال) میں اساتذہ کے مارچ میں حصہ لیا ہے اور ٹویٹر پر اساتذہ کے صفحات میں بتایا گیا ہے کہ گرفتاریوں میں 50 سے زیادہ مرد اور خواتین اساتذہ شامل ہیں۔


اسی سلسلہ میں باخبر سرکاری ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ یہ گرفتاری دھرنہ دینے کے لئے اس طرح اکسانے کے پس منظر میں ہوا ہے جس میں موجودہ قانون اور غیر معمولی دفاعی احکامات کی خلاف ورزی ہے۔


اس واقعہ کے سلسلہ میں اردن کی رائے عامہ تقسیم ہوگئی ہے؛ لہذا اساتذہ سنڈیکیٹ کے حامیوں اور اظہار رائے کی آزادی اور پرامن دھرنے کے حق کے برخلاف نقادوں نے یونین اور اس کی کونسل کو حالیہ کشیدگی کا ذمہ دار ٹھہرایا ہے اور اس بات کی طرف اشارہ کیا ہے کہ یہ نازک معاشی اور معاشرتی حالات کی زد کی وجہ سے ہوا ہے۔


بدھ 15 ذی الحجہ 1441 ہجرى - 05 اگست 2020ء شماره نمبر [15226]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا