عجلت کی وجہ سے ویکسین کی حفاظت کے سلسلہ میں تشویش

عجلت کی وجہ سے ویکسین کی حفاظت کے سلسلہ میں تشویش

منگل, 8 September, 2020 - 13:15
بہت سے سائنسی اداروں نے ان ویکسین کی حفاظت کے بارے میں اپنے خدشات کا اظہار کیا ہے جن کو لوگوں کے لئے پیش کرنے کی توقع کی جا رہی ہے اور اس کی وجہ کچھ لیبارٹریوں کے ساتھ ساتھ کچھ حکومتوں کی جانب سے دکھائی جانے والی ہنگامی صورتحال ہے کیونکہ اس میں سیاسی یا تجارتی مقابلہ موجود ہے۔

ایک سے زائد ملک کی طرف سے ایسے بیانات سامنے آئے جو مختلف نظر آرہے ہیں کیونکہ آسٹریلیائی حکومت نے ایک بیان میں دعوی کیا ہے کہ اس وقت تیسرے مرحلے کے ٹیسٹ سے گزرنے والی آکسفورڈ یونیورسٹی کی ویکسین کو بہت جلد کچھ آسٹریلیائیوں کو دیا چائے گا اور ممکن ہے کہ اگلے جنوری میں اس کے ڈراپ پلائے جائیں گے۔


اسی سلسلہ میں برطانوی وزیر صحت میٹ ہینکوک نے کل اعلان کیا ہے کہ ان کی حکومت کو امید ہے کہ اگلے سال کے اوائل میں وہ کورونا وائرس کے سلسلہ میں کوئی ویکسین تلاش کرلے گا اور انہوں نے مزید کہا کہ برطانوی دواسازی کی لیبارٹری "آسٹرا زینیکا" کے ذریعہ ویکسین کی تیس ملین خوراکیں تیار کرنے کا معاہدہ کیا گیا ہے اور ہاناک نے یہ بھی کہا کہ بہترین منظر نامہ اس سال کسی ویکسین کے سلسلہ میں منظوری کا ملنا ہوگا لیکن سب سے زیادہ امکان اگلے کے پہلے مہینوں میں ہوگا۔(۔۔۔)


منگل 20 محرم الحرام 1442 ہجرى - 08 ستمبر 2020ء شماره نمبر [15260]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا