جزائر: بوتفلیقہ کی جعلی بیٹی کو جیل کی سزا

جزائر: بوتفلیقہ کی جعلی بیٹی کو جیل کی سزا

جمعرات, 15 October, 2020 - 17:45
صحافی خالد درارني کی رہائی کا مطالبہ کرنے کے لئے جزائر کے دار الحکومت میں ہفتہ وار احتجاج کے ایک منظر کو دیکھا جا سکتا ہے (اے ایف پی)
گزشتہ روز جزائر کے دار الحکومت میں ایک عدالت نے سابق صدر عبد العزيز بوتفليقة کی بیٹی ہونے کا دعویٰ کرنے والی ایک خاتون کے خلاف 12 سال قید کی سزا سنائی ہے جبکہ اس سے قبل اس نے دو وزراء اور ایک سابق پولیس چیف پر بدعنوانی کے الزامات لگائے ہیں  اور ان میں سے ہر ایک کو 10 سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔

"میڈم مایا" کی کہانی جس کا اصل نام زليخة نشناش ہے کو ایک معمہ سمجھا گيا ہے اور اس نے غلامی اور بدعنوانی کی کیفیت کا تاثر دیا ہے جس سے بوتفليقة کی حکومت کی حقیقت کھلی ہے۔


کئی سالوں سے "مایا" نے اس بنیاد پر کام کیا ہے کہ وہ صدر کی بیٹی ہیں اور واقعتا وہ ان سے متعلق تھیں جیسا کہ انھوں نے تفتیشی ریکارڈوں میں ذکر کیا ہے لیکن یہ رشتہ ابہام کا شکار رہا ہے۔(۔۔۔)


جمعرات 28 صفر المظفر 1442 ہجرى – 15 اکتوبر 2020ء شماره نمبر [15297]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا