واشنگٹن میں برطرفی کے سلسلہ کے ساتھ حیرت انگیز کاروائی کا خدشہ

واشنگٹن میں برطرفی کے سلسلہ کے ساتھ حیرت انگیز کاروائی کا خدشہ

بدھ, 11 November, 2020 - 12:15
اٹارنی جنرل ولیم بار کو گزشتہ روز واشنگٹن کے دارالحکومت سے روانہ ہوتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے (ای پی اے)
گزشتہ روز امریکی دارالحکومت میں ایسے ماحول پیدا ہو گئے ہیں کہ جن کی وجہ سے صدر ڈونلڈ ٹرمپ اپنے وزیر دفاع مارک ایسپر کے اچانک برطرفی کے ایک روز بعد اپنے وفادار ہونے کے شبہہ میں بڑے عہدے داروں کو نشانہ بنانے کا سلسلہ شروع کر سکتے ہیں۔

اسابق عہدیداروں اور ماہرین نے امریکی صدر کے اقتدار کے حوالے کرنے کی تاریخ سے قبل ہی ایک دشمنانہ اہداف کے خلاف اچانک فوجی کارروائی شروع کرنے کے امکانات کے بارے میں بات کی ہے۔


ایک ایسے وقت میں جب ٹرمپ انتخابی نتائج کو قبول کرنے سے انکار کررہے ہیں اپنے پیچھے ریپبلکن پارٹی کی صفوں کو متحد کرنے کی کوشش کر رہے ہیں اور صدر منتخب ہونے والے جو بائیڈن کی ٹیم کے انتقالی مرحلہ کے انتظام سے متعلق منظوری حاصل کرنے میں ناکام ہونے کی وجہ سے عبوری مرحلے کے آغاز کی معطلی جاری ہے اور اس انتظامیہ کی سربراہی ٹرمپ کے ذریعہ مقرر کردہ ایک ملازمہ کررہی ہیں۔(۔۔۔)


بدھ 25 ربیع الاول 1442 ہجرى – 11 نومبر 2020ء شماره نمبر [15324]


انتخاباتِ مدير

ملٹی میڈیا